بنک کا سود

بنک کا سود


سوال: سود یا ربا جسے اسلام میں حرام قرار دیا گیا ہے اس سے کیا مراد ہے؟ آیا اس سے وہ'interest' مراد ہے جو بنک رقوم جمع کرانے والوں کو ادا کرتا ہے یا اس سے وہ 'usuary' مراد ہے جسے سود مرکب یا حد سے زیادہ شرح والا سود کہا جاتا ہے۔ بنک جو سود ادا کرتا ہے ،وہ تو بہ مشکل' inflation'کی اس اوسط شرح کے بقدر ہوتا ہے جس سے ہمارا روپیہ 'devalue'ہو رہا ہے۔ ایسی صورت میں اس کے حرام ہونے کی کوئی وجہ نظر نہیں آتی ،کیونکہ'interest'کی وہ رقم بے شک گنتی میں نوٹوں کی تعداد تو بڑھا دیتی ہے، لیکن درحقیقت وہ ہمارے اصل اثاثے کو 'value' کے اعتبار سے برقرار رکھنے کے سوا ہمیں کوئی اور فائدہ نہیں دیتی۔ جبکہ سود مرکب اور زیادہ شرح والے سود کا معاملہ واقعۃً ایک ظلم ہے۔ چنانچہ سوال یہ ہے کہ اسلام کے نزدیک یہ اضافہ جو 'inflation'کی شرح کے بقدر ہوتا ہے اور جس سے دولت کی 'value' میں کوئی اضافہ نہیں ہوتا، کیا وہ بھی حرام ہے؟(شوکت علی)

جواب: بنک 'interest'دیتا بھی ہے اور لیتا بھی ہے۔ لینے والے 'interest'کی شرح دینے والے 'interest'کی شرح سے بہت زیادہ ہوتی ہے۔بنک ان دونوں 'interests'کو ایک ہی شے قرار دیتا ہے۔حالانکہ ایک کی شرح تقریباً 'inflation' کی شرح کے بقدر ہوتی ہے ، لیکن دوسرے کی شرح 'inflation'کی شرح سے تین گنا یا چار گنا تک ہوتی ہے۔ سوال یہ ہے کہ یہ کیا معمہ ہے؟ بنک اور بنک سے قرض لینے والا دونوں کے لیے 'inflation'کی شرح مختلف کیوں ہے؟

حقیقت یہ ہے کہ بنک جب کسی سے سود لیتا ہے تو وہ پورے شعور کے ساتھ اللہ کا حرام ٹھہرایا ہوا سودی اضافہ ہی لیتا ہے اور جب کسی کو سود دیتا ہے تو وہ اپنی طرف سے وہی اللہ کا حرام ٹھہرایا ہوا اضافہ ہی اس کو دیتا ہے۔

رہا یہ معاملہ کہ ہمارے ہاں بنک جو سود دیتا ہے، اس کی شرح، چونکہ' inflation'کی شرح کے قریب ہوتی ہے، لہٰذا کیا وہ سود ہمارے لیے جائز نہیں ہے؟ تو اس سلسلے میں گزارش یہ ہے کہ اگر بنک اور کسٹمر ،دونوں کی نیت اور ارادہ واقعۃً جمع شدہ روپے کو 'inflation'سے پیدا ہونے والے نقصان سے بچانا ہے اور سال کے آخر پر باقاعدہ متعین ہونے والی 'inflation'کے حساب ہی سے رقم میں اضافہ کرنا ہے تو پھر اس میں یقیناًکوئی حرج نہیں ہے۔ یہ تو ایسے ہی ہے کہ گویا آپ نے ڈالرز کی شکل میں جتنا قرض دیا تھا، بالکل اتنا ہی ڈالرز کی شکل میں واپس لے لیا۔ چنانچہ یہ بالکل جائز ہو گا۔

یہ ذہن میں رہے کہ سود تو ہر صورت میں حرام ہے، لیکن اگر کوئی شخص بنک سے حاصل ہونے والے اضافی روپے میں سے 'inflation'کے مطابق حساب لگاکر رقم رکھ لیتا اور باقی رقم کی ایک ایک پائی بنک کو واپس کر دیتا یا بغیر ثواب کی نیت کے غربا میں تقسیم کر دیتا ہے تو اس کی نیت چونکہ سود لینے کی نہیں، بلکہ محض 'cover inflation 'کرنے کی ہے،لہٰذا ایسا شخص بالکل صحیح ہو گا اور اس پر کوئی اعتراض نہیں ہو سکتا۔

____________




Articles by this author