حاجی کا آخری کام طواف وداع

حاجی کا آخری کام طواف وداع


عن بن عَبَّاسٍ رضي الله عنهما قال أُمِرَ الناس أَنْ يَكُونَ آخِرُ عَهْدِهِمْ بِالْبَيْتِ إلا أَنَّهُ خُفِّفَ عن الْحَائِضِ. (بخارى، رقم 1755)

حضرت ابن عباس رضی اللہ عنہما سے روايت ہے کہ لوگوں کو حکم ديا گيا تھا کہ ان کا آخری كام يہ ہونا چاہيے كہ وه بیت اللہ كا طواف (وداع) كريں، البتہ حائضہ عورتوں پر یہ حكم نہيں تها۔

عن بن عَبَّاسٍ قال كان الناس يَنْصَرِفُونَ في كل وَجْهٍ فقال رسول اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَا يَنْفِرَنَّ أَحَدٌ حتى يَكُونَ آخِرُ عَهْدِهِ بِالْبَيْتِ. (مسلم، رقم 3219)

حضرت ابن عباس (رضی اللہ عنہ) سے روایت ہے کہ لوگ ہر ایک راستے سے واپس ہو جایا کرتے تھے تو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے يہ حكم دے ديا کہ کوئی واپس نہ جائے جب تک کہ آخر میں بھی بیت اللہ کا طواف نہ کرلے۔

________




Articles by this author