سواری پر طواف کی اجازت

سواری پر طواف کی اجازت


عَنْ عروةَ بنِ زبيرٍ عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ رضي الله عنها زَوْجِ النبي صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قال وهو بِمَكَّةَ وَأَرَادَ الْخُرُوجَ ولم تَكُنْ أُمُّ سَلَمَةَ طَافَتْ بِالْبَيْتِ وَأَرَادَتْ الْخُرُوجَ فقال لها رسول اللَّهِ صَلَّى اللهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إذا أُقِيمَتْ صَلَاةُ الصُّبْحِ فَطُوفِي على بَعِيرِكِ وَالنَّاسُ يُصَلُّونَ فَفَعَلَتْ ذلك فلم تُصَلِّ حتى خَرَجَتْ. (بخارى، رقم 1626)

حضرت عروہ بن زبير،نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی زوجہ ام سلمہ رضی اللہ عنہا سے روايت كرتے ہيں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم جب مکہ میں تھے اور وہاں سے چلنے کا ارادہ ہوا توام سلمہ رضی اللہ عنہا نے کعبہ کا طواف نہیں کیا، حالاں كہ وہ بھی روانگی کا ارادہ رکھتی تھیں، آپ نے ان سے فرمایا کہ جب صبح کی نماز کھڑی ہو اور لوگ نماز پڑھنے میں مشغول ہو جائیں تو تم اپنی اونٹنی پر طواف کر لینا۔ چنانچہ ام سلمہ (رضی اللہ عنہا) نے ایسا ہی کیا۔ چنانچہ انهوں نے باہر نکلنے تک نماز نہیں پڑھی۔

________




Articles by this author