حضرت آدم علیہ السلام کی دعا

فضائل اعمال میں ہے کہ حضرت آدم علیہ السلام کو جب معافی دی گئی تو آپ نے اللہ پاک سے یہ دعا کی کہ مجھے اپنے حبیب کے صدقے معاف کر دو۔ اللہ پاک نے آدم علیہ السلام سے یہ پوچھا کہ آپ نے یہ کہاں سے پڑھا ہے؟ آدم علیہ السلام نے ان سے درخواست کی کہ میں نے آپ کے ساتویں آسمان کے اوپر یہ لکھا ہوا دیکھا تھا کہ یہ آپ کے رسول ہیں تو اللہ تعالیٰ نے آپ کو معاف کر دیا۔ جبکہ ہم نے تو آج تک یہی پڑھاہے ، قرآن میں آتا ہے کہ اللہ پاک نے آپ کو یہ کلمات سکھائے کہ ’رَبَّنَا ظَلَمنَا...‘ ۔ کیا یہ قصہ قرآن و حدیث سے ثابت ہے ؟

پڑھیے۔۔۔

‘علم آدم الاسماء’ کی تشریح

سورہ بقرہ میں ہے کہ

 'علم آدم الأسماء' (البقرہ ٢:٣١)

 اللہ تعالیٰ نے حضرت آدم علیہ السلام کو کچھ نام سکھائے، یہ کیا نام تھے۔ کیا یہ کوئی علم تھا؟

پڑھیے۔۔۔

اولاد آدم كی آپس ميں شادی

1۔ کیا مسجدوں اور مدرسوں کو زکوٰۃ دینا جائز ہے یا نہیں؟

2۔ میں نے ایک عالم دین سے سنا ہے کہ حضرت آدم علیہ السلام کی پسلی سے اللہ تعالیٰ نے بی بی حوا کو پیدا کیا اور ہم ان کی ہی اولاد ہیں۔ تو ان کی اولاد تو آپس میں بہن بھائی ہوئی۔ اگر يہہ صحيح ہے تو ان کا آپس میں نکاح کس طرح ہو گیا؟ اسلام میں تو بہن بھائی کا آپس میں نکاح نہیں ہو سکتا۔

پڑھیے۔۔۔

دنیا کا پہلا انسان

کیا آدم علیہ السلام دنیا کے پہلے انسان تھے یا انسان کی تخلیق ان سے پہلے ہو چکی تھی۔ انسان کی تخلیق کیسے ہوئی تھی؟ کیا آدم علیہ السلام ہی پہلے نبی ہیں یا نوح علیہ السلام پہلے نبی ہیں۔ نیز فرشتوں کے آدم کو سجدہ کرنے کا واقعہ کیا کوئی حقیقی واقعہ ہے یا یہ قرآن کا ایک انداز تمثیل ہے؟

پڑھیے۔۔۔

تخلیق کائنات اور تخلیق آدم ۔ آخر کیوں

محترم ریحان احمد صاحب

اس مفصل تحریر کا شکریہ۔ کاش کہ میں اپنے سوال میں ایک نکتہ کا اور اضافہ کر دیتا تو آپ کے رشحات قلم میرے اشکال کی بیخ تک پہنچ کر میرے اطمینان کا باعث بنتے۔

میں ان تمام معاملات میں خدا کی حکمت کا منکر ہرگز نہیں۔ لیکن سوچتا ہوں کہ خدا نے یہ سب بغیر اپنے فائدہ اور ضرورت کے پیدا کیا۔ کچھ حکمتیں مقر ر کیں اورہم ان حکمتوں کا شکار بنے۔ اس نے جو چاہا کیا ۔ فیل اور پاس کے امکانات بھی اس نے پیدا کیے۔ پھر ہم فیل اور پاس بھی ہوے تاکہ اس کی حکمت کے تقاضے پورے ہوں۔ حکمت تو پوری ہوئی مگر ہمارے نفع نقصان کی قیمت پر۔ خداکو اس سب کے برپا کرنے کی ضرورت نہ تھی نہ ہی ہمیں ضرورت تھی کہ یہ سب برپا ہو۔ ابو بکر بھی تمنا کرتے تھے کہ کاش جنے نا جاتے۔ کچھ ایسا ہی تاثر میرا ہے کہ کاش یہ سب نا ہوتا۔ بھلے ہمیں زندگی نہ ملتی، شعور نہ ملتا، جنت نا ملتی۔ مگر وہ جو ناکام ہوئے وہ بھی نہ ہوتے۔ خدا نے جو چاہا کیا، مگر بلا ضرورت کیا۔ تو کیا یہ رحمانیت ہے؟

محترم میں خدا سے ڈرتا ہوں مگر میں اس سے محبت کرنا چاہتا ہوں۔ اس کا تعارف رحمان اور رحیم سے شروع ہوتا ہے، اور میں ابھی اسی کو نہیں سمجھ پا رہا۔ میں خدا پر اعتراض نہیں کرنا چاہتا، سمجھنا چاہتا ہیں۔جواب درد مندی سے دیجئیے گا۔

پڑھیے۔۔۔

شيطان پر پابندياں

میں چند سوالات پوچھنا چاہتا ہوں۔ برائے مہر بانی ان کے جوابات ارسال کر دیں۔

۱۔ شیطان کے سجدے پر انکار کرنے پر اﷲ تعالیٰ نے لعنت کر کے جنت سے نکال دیا۔ پھر ابلیس آدمؑ اور حوا کو بہکانے کے لیے جنت میں کیونکر پہنچ گیا؟ کیا ہم کہہ سکتے ہیں کہ شیطان کی رسائی جنت تک بھی ہے اور رہے گی؟

۲۔ شیطان نے اﷲ تعالیٰ سے قیامت کے روز تک کی مہلت مانگی جو اسے دے دی گئی۔ پھر شیطان جو رمضان میں جکڑ لیا جاتا ہے وہ کیا ہے؟ کیا یہ دی گئی مہلت کی خلاف ورزی نہیں؟

پڑھیے۔۔۔

تخلیقِ آدم کا مقصد

اللہ تعالیٰ نے حضرت آدم علیہ السلام کو کیوں پیدا کیا؟

پڑھیے۔۔۔