بچوں کی خاطر جھوٹ میں کلمہ پڑھنا

میں بریلوی مسلک سے تھا اور میری شادی بھی بریلوی مسلک کی لڑکی سے ہوئی۔ جب میں نے جاوید احمد صاحب غامدی کو سنا تو میں نے تمام شرکیہ باتوں سے توبہ کی۔ جب میری وائف کو پتہ چلا تو وہ مجھے اور بچوں کو چھوڑ کر اپنے امی ابو کے گھر چلی گئی اور مجھے کافر قرار دے دیا۔ واپسی کی شرط یہ تھی کہ دوبارہ بریلوی ہو جاؤں اور کلمہ پڑھ کر دوبارہ مسلمان ہو جا‏ؤں، پھر دوبارہ نکاح ہو گا۔ میرے بچے ابھی بہت چھوٹے ہیں، ان کی عمر 3، 4 اور 5 سال ہے۔ میں نے بچوں کی خاطر جھوٹ میں کلمہ پڑھ کر توبہ کی، دوبارہ نکاح کیا اور وائف کو یقین دلایا کہ اب میں بریلوی ہو چکا ہوں۔ جبکہ دل سے میں سچا مسلمان ہوں، پلیز مجھے گائیڈ کر دیں کہ میں نے غلط کیا یا صحیح کیا۔ دل میں ارادہ ہے کہ بچے جب سمجھدار ہو جائیں گے تب دوبارہ اعلان کروں گا۔

پڑھیے۔۔۔

مصلحت کے تحت جھوٹ بولنا

میرا سوال یہ ہے کہ اگر کسی کو نقصان پہنچانا یا فراڈ کرنا پیش نظر نہ ہو اور کسی مصلحت کے تحت جھوٹ بولا جائے تو کیا یہ جائز ہے؟ برائے مہربانی وضاحت فرمائیں۔

پڑھیے۔۔۔

کسی اچھے کام کے ليے جھوٹ بولنا

اگر ہم اپنا نام بتائے بغیر کسی کی مدد کرنا چاہتے ہوں تو کیا جھوٹ کا سہارا لے کر اپنی جگہ کسی اور کا نام لیا جا سکتا ہے؟

پڑھیے۔۔۔