لوحِ قرآنی اور حروفِ مقطعات

لوحِ قرآنی کا کیا تصور ہے اور اس سے کیا مرادہے؟

کسی نے مجھے ’ الٰم‘کا یہ مطلب بتایا تھا کہ الف سے مراد اللہ تعالیٰ ہے ، میم سے مراد محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہیں اور لام کا مطلب نہیں ہے یعنی مطلب یہ ہوا کہ ’’یہ محمد نہیں ہیں جو بول رہے ہیں ، بلکہ یہ اللہ تعالیٰ ہے جو محمد میں سے کلام فرما رہا ہے ۔‘‘ اس کی دلیل اس نے یہ دی کہ اللہ فرماتا ہے کہ جب تم میرے ہوجاتے ہو تو میں تمہارا ہو جاتا ہوں ، میں تمہارے ہاتھ بن جاتا ہوں اور میں تمہاری زبان بن جاتا ہوں ۔ اس پر آپ کیا کہتے ہیں؟

پڑھیے۔۔۔