ملکہ سبا کا تخت

قرآنِ مجید کے مطابق ایک شخصیت نے ملکۂ سبا کا تخت حضرت سلیمان علیہ السلام کے سامنے پلک جھپکتے میں حاضر کر دیا تھا۔ یہ کام کس علم کے تحت انجام دیا گیا؟

پڑھیے۔۔۔

جادو اور روحانی علم

میں نے نیٹ پر آپ کی البیان کا مطالعہ کیا ہے۔ اس میں سلیمان علیہ السلام کے وقت میں جادو کے بارے میں آپ نے لکھا ہے کہ یہ ایک دوسرا علم ہے یہ بات مجھے پسند آئی مگر آپ نے یہ بھی لکھا ہے کہ یہ جادو اور روحانی علم دونوں اللہ کے اذن سے کام کرتے ہیں اس پر میرے ذہن میں سوال آتا ہے کہ وماہم بضارین بہ میں بھما ہونا چاہیے تھا۔ جادو کے ساتھ اذن کا لفظ موذوں نہیں لگتا۔

پڑھیے۔۔۔

رمضان میں شیطان کے باندھ دیے جانے کا اصل مفہوم کیا ہے؟

میں چند سوالات عرض کرنا چاہتا ہوں۔ برائے مہربانی اپنا قیمتی وقت نکال کر ان کا جواب دیتے ہوئے شکریے کا موقع دیجیے۔ ١۔ قرآن مجید میں ہے کہ سلیمان علیہ السلام نے سرکش شیاطین کو زنجیروں سے باندھ لیا تھا۔ یہ باندھنا کیسا تھا؟ مزید یہ کہ رمضان میں شیطان کے باندھ دیے جانے کا اصل مفہوم کیا ہے؟ ٢۔ سلیمان علیہ السلام نے جب ملکہ سبا کا تخت لانے کے لیے کہا تو ایک جن نے کہا کہ میں محفل برخاست ہونے سے پہلے یہ تخت لے آؤں گا۔ اور دوسرے شخص نے جو زیادہ علم والا تھا نے کہا کہ میں پلک جھپکنے میں وہ تخت لا سکتا ہوں اور قرآن کے مطابق اس نے وہ لا کر بھی دیا۔ میں یہ جاننا چاہتا ہوں کہ یہ کیسا علم تھا جس کے ذریعے ایک کام اتنے کم وقت میں ہو گیا۔
برائے مہربانی اپنے علم کے رہنمائی فرمائیے۔

پڑھیے۔۔۔