کیا زکوٰۃ کی رقم سے کسی شخص کا قرض ادا کیا جا سکتا ہے

کیا زکوٰۃ کی رقم سے کسی شخص کا قرض ادا کیا جا سکتا ہے،خواہ وہ قرض دار ساس یا سسر ہی ہوں؟

پڑھیے۔۔۔

قرض کی رقم پر منافع لینا

کسی آدمی کو اگر اس صورت میں قرض دیا جائے کہ اصل رقم تو ہر حال میں مقروض کے ذمہ رہے، مگر اس رقم سے منافع کی صورت میں اسے بھی منافع میں شریک کیا جائے۔ کیا ایسا کرنا ٹھیک ہے؟

پڑھیے۔۔۔

اجارہ اسکیم اور سود

بعض اسلامی بینکوں کی متعارف کرد ہ اجارہ اسکیم کے تحت لیز پر کار لینا صحیح ہے یا نہیں؟

پڑھیے۔۔۔

سود پر قرض لینا

بینک سے سود پہ قرض لینے کے بارے میں اسلام ہماری کیا رہنمائی فرماتا ہے؟

  1. کیا ٹریکٹر خریدنے کے لیے زرعی بینک سے سود پر قرض لیا جا سکتا ہے؟
پڑھیے۔۔۔

قرض پر سود ادا کرنا

ہمارے ملک میں جو کاروبار بھی کیا جائے، اس کے لیے بینک سے سود پر قرض لینا پڑتا ہے۔کیا سود دینا بھی اسلام میں اسی طرح ممنوع ہے، جیسا کہ سود لینا؟

پڑھیے۔۔۔

سود پر قرض

میں پاکستان اٹامک انرجی کمیشن میں سائنٹفک اسٹنٹ ہوں۔ سرکاری ملازمین کو پندرہ تنخواہوں کے برابر قرضہ دیتا ہے۔ جس پر وہ گیارہ فیصد سالانہ سود لیتا ہے۔ بعض علماء اسے صریح حرام قرار دیتے ہیں۔ اس لیے اس سے اجتناب کا حکم دیتے ہیں۔ جبکہ بعض علماء نزدیک اس سے بچنا چاہیے لیکن انتہائی ناگزیر حالات ہوں تو اسے لیا جا سکتا ہے۔ جہاں تک میرے محدود علم کا تعلق ہے قرآن میں قرض خواہ کو سود کھانے سے منع کیا گیا ہے اور تنقید کا موضوع قرض خواہ ہے جبکہ مقروض کے متعلق ایک لفظ بھی نہیں کہا گیا۔میں آپ سے درخواست کرتا ہوں کہ اس پر اپنی رائے دیجیے۔

پڑھیے۔۔۔

قرض اور سود

میں نے اپنے دوست کو اس کی بیٹی کی شادی کے موقعہ پر دو لاکھ روپے دو سال کے لئے ادھار دیے۔ اب دو سال بعد میرا دوست مجھے صرف اصل رقم واپس کر رہا ہے جبکہ اس عرصہ میں روپے کی قیمت بہت گر چکی ہے۔ کیا میں اپنے دوست سے یا مطالبہ کر سکتا ہوں کہ افراط زر کی وجہ سے جو نقصان ہو ہے وہ بھی ادا کرے۔

میں کاروبار کرتا ہوں۔ میرا کام اللہ کے فضل سے بہت اچھا جا رہا ہے۔ اس سے میری ضروریات پوری ہو رہی ہیں۔ ان حالات میں میں اپنے کاروبار کو وسیع کرنے کے لئے قرض لینا چاہتا ہوں۔ کیا میں قرض دینے والے شخص کو ایک متعین رقم نفع کے طور پر دے سکتا ہوں؟ کیا یہ تعیین وقت کی وجہ سے سود شمار ہو گا؟

پڑھیے۔۔۔

چند اقسامِ قرض

قرض کی درج ذیل دوقسموں کے بارے میں آپ کی رائے درکار ہے:

  1. مکان کی ملکیت کے حصول سے پہلے آپ مکان کی قیمت (قرض) کی قسطوں میں ادائیگی کے ساتھ ساتھ کچھ مزید رقم بھی بطورِ کرایہ ادا کرتے ہیں تو کیا یہ رقم ادا کرنا صحیح ہے ؟
  2. بینک آپ کے لیے مکان خریدتا ہے اور قسطوں میں اصل رقم (قرض)سے زیادہ رقم وصول کرتا ہے تو کیا یہ رقم سود ہو گی یا بینک کے ساتھ اس طرح کی ڈیل کی جا سکتی ہے ؟
پڑھیے۔۔۔

بینک سے قرض لے کر گھر خریدنا

میں ایک مڈل کلاس فیملی سے تعلق رکھتا ہوں ۔میری آمدنی 50,000 ہے اور میں کرائے کے گھر میں رہتا ہوں۔اس وقت کراچی میں مکانات بہت مہنگے ہیں جس کی وجہ سے اپنا مکان خریدنا بہت مشکل ہے تو کیا میں اس صورت میں بینک سے قرضہ لے کر اپنے لیے کوئی فلیٹ وغیرہ خرید سکتا ہوں ۔اس کے لیے مجھے بینک کو سود بھی دینا ہو گاجبکہ قرآن میں اس کی مذمت کی گئی ہے۔لیکن قرآن میں تو سود لینے والے کو لعنت دی گئی ہے نہ کہ دینے والے کو۔ بتائیے مجھے کیا کرنا چاہیے؟

پڑھیے۔۔۔