زیارتِ مدینہ اور مسجد نبوی میں چالیس نمازیں

سفرِ حج وعمرہ میں زیارتِ مدینہ منورہ کی دینی حیثیت کیا ہے ؟ کیا مسجدِ نبوی کی زیارت کرنا حج وعمرہ کی عبادات سے بھی کوئی تعلق رکھتا ہے ؟ عام طور پر کہا جاتا ہے کہ حاجی یا معتمر کو چاہیے کہ وہ مدینہ منورہ مین اپنے قیام کے دوران مین مسجدِ نبوی میں کم سے کم چالیس فرض نمازیں بغیر کسی ناغے کے جماعت کے ساتھ پڑھے تو اِس عمل کی دین میں بڑی فضیلت ہے ۔ حدیث وسنت کی رو سے کیا یہ بات درست ہے ؟

پڑھیے۔۔۔

مسجد نبوی کی زیارت

کیا نبی ؐ کی قبر کی زیارت واجب ہے؟ کیا وہ زمین جس سے نبی ؐ کے جسم کا حصہ لگا ہو وہ کعبہ اور عرش وسامہ سے بہتر ہے؟ کیا نبی ؐ مدینہ والی قبر میں زندہ ہیں اور اس کی زندگی دنیا والی زندگی کی طرح ہے؟ کیا مسجد نبوی میں دعا کرتے وقت محمد ؐ کی قبر کی طرف منہ کرنا چاہیے اور کعبہ کی طرف منہ نہیں ہونا چاہیے؟ یہ سب باتیں میں نے مولویوں سے سنی ہیں لیکن میرا دل قران کی سے تھوڑی بہت واقفیت ہونے کی وجہ سے نہیں مانتا۔ آپ قران اور حدیث کی روشنی میں جواب دے دیجیے اور غامدی صاحب کا موقف بھی بیان کیجیے۔

پڑھیے۔۔۔