زکوٰۃ یا ٹیکس

زکوٰۃ اسلامی حکومت کا ٹیکس ہے ، ہماری حکومت خالصتاً اسلامی نہیں اور نہ وہ ہم سے وصول کیے ہوئے ٹیکس کو زکوٰۃ کے آٹھ مصارف پر خرچ کرتی ہے ، تو پھر ہم کیسے سمجھ لیں کہ ہماری زکوٰۃ ادا ہو گئی ہے؟

پڑھیے۔۔۔

تنخواہ پر زکوٰۃ یا ٹیکس

کیا ایک آدمی کو اپنے مال پر زکوٰۃ بھی دینا ہو گی اور حکومت کے ٹیکس بھی دینا ہوں گے؟ نیز اگر تنخواہ پر پیداوار کی ماہانہ دس فی صد زکوٰۃ ادا کرنے کے بعد سال کے آخر میں کچھ رقم جمع ہو جاتی ہے تو کیا اس پر مال کی زکوٰۃ بھی عائد ہو گی۔

پڑھیے۔۔۔

تنخواه پر زکوۃ

میرا سوال یہ ہے کہ تنخواہ پر زکوٰۃ ہر مہینے دینی ضروری ہے یا سال میں ایک ہی بار دینا کافی ہے؟ اگر سال میں ایک ہی بار دیں گے تو کیا بارہ (١٢) ماہ کی کل تنخواہ کا حساب کر کے دینی پڑے گی یا موجودہ رقم پر ہی زکوٰۃ دینا ہو گی جتنی کہ فی الحال انسان کے پاس موجود ہو؟ مہربانی فرما کر قرآن و حدیث کی روشنی میں رہنمائی فرمائیے۔

پڑھیے۔۔۔

رياست ، زکوۃ اور ٹيکس

آپ نے ايک پروگرام ميں بتايا تھا کہ زکوۃ دراصل رياست کو ديني چاہيے۔ ليکن رياست زکوۃ کي بجائے ٹيکس وصول کرتي ہے۔ کيا ايک شخص جو ٹيکس ديتا ہے اس ميں سے زکوۃ منہا کر سکتا ہے۔ دوسرے زکوۃ کي بہت سي قسميں ہيں ، آپ کے نزديک ٹيکس کي کون سي قسم سے زکوۃ منہا ہو سکتي ہے؟ ويسے عام اہل علم زکوۃ اور ٹيکس کو الگ الگ چيز سمجھتے ہيں۔

پڑھیے۔۔۔

زکوٰۃ کے مصارف (غامدی صاحب کی رائے )۔

چند سوالات سے متعلق رہنمائی مطلوب ہے۔

١۔ زکوٰۃ کے مصارف کے وضاحت کیجیے اور اس معاملے میں غامدی صاحب کی رائے کا باقی علماء کی آراء سے جو اختلاف ہے اسے بھی واضح کیجیے۔

٢۔ غامدی صاحب نے میزان میں لکھا ہے کہ حکومت ایک چیز کے لیے زکوٰۃ کا الگ نصاب بھی مقرر کر سکتی ہے اور ایک چیز کو زکوٰۃ سے مثتثنیٰ بھی کر سکتی ہے۔ اس کی وضاحت کریں۔ مزید یہ جاننا چاہتا ہوں کہ زکوٰۃ اللہ تعالیٰ کا حق ہے تو پھر اس کو حکومت کیسے معاف کر سکتی ہے؟

٣۔ میرے ایک دوست نے بتایا کہ غامدی صاحب حکومت کے ٹیکس کو ناجائز قرار دیتے ہیں لیکن اگر حکومت زکوٰۃ کا نصاب خود متعین کر سکتی ہے تو پھر حکومت صاحب نصاب سے ١٠٠ روپے میں ٥٠ روپے زکوٰۃ بھی لے سکتی ہے، اور ٹیکس پر اعتراض غریب کی حد تک رہتا ہے کہ اس سے نہ لیا جائے اور باقی لوگوںسے لیا جائے۔

برائے مہربانی تفصیلی وضاحت فرمائیے۔

پڑھیے۔۔۔