تقدیر اور دعا

کیا ہم اپنی تقدیر دعا سے بدل سکتے ہیں۔ یا جو اللہ نے ہمارے مقدر میں لکھ دیا ہے وہی ہوگا۔اگر معاملہ یہ ہے تو پھر ہم دعا کیوں کرتے ہیں۔

 اللہ نے بہت سے فیصلے انسان پر چھوڑ دیے ہیں۔انسان جو فیصلہ کرتا ہے کیا ہم یہ کہہ سکتے ہیں کہ وہی خدا کو منظور تھا۔ایک مثال کے مطابق :اگر کوئی اپنی پسند کی شادی کرنا چاہتا ہےاور لڑکی کے گھر والے سب جانتے ہوئے بھی اس کی شادی کہیں اور کر دیں تو کیا یہ کہنا درست ہوگا کہ اللہ کی جو مرضی تھی یا جو مقدر تھا وہی ہوا۔کون ذمہ دار ہے۔ لیکن میرا خیال یہ ہے کہ یہ اللہ کا فیصلہ نہیں تھا۔ یہ تو اس کے گھر والوں نے جان بوجھ کر کیا کیونکہ اللہ نے ہمیں یہ حق دیا کہ ہم اپنی پسند کی شادی کریں۔ تو اس صورت حال میں ہمیں کیا کہنا چاہیے۔ جو خدا کی رضا، یا اس کے گھر والوں کو الزام دینا چاہیے۔

پڑھیے۔۔۔