Search

حج کی اقسام

سوال:

جواب:

آپ نے بات کو ٹھیک سمجھا ہے۔ اللہ تعالیٰ کی منشا یہی ہے کہ حج اور عمرہ الگ الگ سفر میں ادا کیے جائیں۔ گویا اصل حج وہی ہے جسے حجِ فرد کا نام دیا گیا ہے۔ تاہم لوگوں کوایک رعایت یہ دی گئی ہے کہ وہ حج کے سفر میں عمرے کی ادائیگی کافائد ہ اٹھا سکتے ہیں۔ لیکن اس صورت میں انہیں قربانی کرنی ہو گی یا دس روزے رکھنے ہوں گے ، تین حج کے دنوں میں اور سات حج سے واپسی کے بعد (بقرہ 2: 196)۔ باقی قِران والی بات بھی آپ نے ٹھیک سمجھی ہے کہ یہ حج کی کوئی قسم نہیں ہے ، بلکہ جو لوگ حج کے ساتھ عمرہ ادا کرنا چاہتے ہوں اور وہ لوگ ہدی کے جانور ساتھ لے کر آجائیں تو اس صورت میں وہ عمرہ تو ادا کر لیں گے لیکن اس کے بعد احرام نہیں کھول سکتے۔ وہ اُس وقت احرام کھولیں گے جب دس تاریخ یعنی یوم النحر کو ان کے لائے ہوئے ہدی کے جانوروں کی قربانی ہو جائے۔ وہ اس کے بعد ہی سر منڈوا کر احرام سے باہر آئیں گے۔

Rehan Ahmed Yusufi