اولاد آدم كی آپس ميں شادی

سوال:

1۔ کیا مسجدوں اور مدرسوں کو زکوٰۃ دینا جائز ہے یا نہیں؟

2۔ میں نے ایک عالم دین سے سنا ہے کہ حضرت آدم علیہ السلام کی پسلی سے اللہ تعالیٰ نے بی بی حوا کو پیدا کیا اور ہم ان کی ہی اولاد ہیں۔ تو ان کی اولاد تو آپس میں بہن بھائی ہوئی۔ اگر يہہ صحيح ہے تو ان کا آپس میں نکاح کس طرح ہو گیا؟ اسلام میں تو بہن بھائی کا آپس میں نکاح نہیں ہو سکتا۔


جواب:

1۔ اکثر علما مساجد اور مدارس کو زکوۃ دینا صحیح نہیں سمجھتے، لیکن ہمارے نزدیک مساجد اور مدارس کو زکوۃ دی جاسکتی ہے ۔ تفصيل كے لئے مولانا امين احسن اصلاحی كی كتاب مسئلہ تمليك كا مطالعہ كيجئے۔ مسئلہ تمليك مدرجہ ذيل لنك سے ڈاؤن لوڈ كی جا سكتی ہے: http://al-mawrid.org/pages/dl.php?book_id=62

2۔ یہ تورات کا بیان ہے کہ حوا کو آدم کی پسلی سے پیدا کیا گیاتھا ۔ قرآن یہ بتاتا ہے کہ خدا نے آدم و حوا کو ایک ہی جان سے پیدا کیا تھا، چنانچہ یہ دونوں ایک ہی جنس سے ہیں۔ جیسے کہ سب مرد اور سب عورتیں ایک دوسرے کی جنس سے ہیں، یعنی سب ایک ہی جنس سے ہیں۔

آدم و حوا کی اولاد میں سے لڑکے اور لڑکیاں یقینا آپس میں بہن بھائی تھے۔ البتہ بعض روایات سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کے ہاں خدا کی قدرت سے جڑواں بہن اور بھائی پیدا ہوتے تھے اور ان کی آپس میں شادی نہیں ہوتی تھی، بلکہ دوسرے جڑواں بہن بھائیوں کے ساتھ ہوتی تھی۔ گویا اس طرح سے اللہ نے بہن بھائی ہونے میں ایک نوعیت کا فرق کر رکھا تھا۔ بہرحال جو سوال آپ نے اٹھايا ہے وہ اس سے حل نہيں ہوتا۔ بہن بھائی تو پھر بھی رہتے ہيں۔ ہم يہ سمجھتے ہيں كہ شادی كے بارے ميں يہ حرمتيں شروع ميں نہ تھيں۔ يہ صرف اس وقت عمل ميں آئيں جب خاندان كا ادارہ قائم ہو گيا اور اس كا تقدس مقتضی ہوا كہ ايسی پابندی لگا دی جائے۔ گويا جب تك خاندان اپنی پوری شكل ميں وجود ميں نہ آيا تھا يہ پابندی نہ تھی۔ جب نسل انسانی اپنے اس دور سے آگے بڑھ گئی تو اللہ تعالیٰ نے اپنی حكمت بالغہ سے بہن بھائی کی آپس میں شادی حرام قرار دے دی۔

answered by: Rafi Mufti

About the Author

Muhammad Rafi Mufti


Mr Muhammad Rafi Mufti was born on December 9, 1953 in district Wazirabad Pakistan. He received formal education up to BSc and joined Glaxo Laboratories Limited. He came into contact with Mr Javed Ahmad Ghamidi in 1976 and started occasionally attending his lectures. This general and informal learning and teaching continued for some time until he started regularly learning religious disciplines from Mr Ghamidi in 1984. He resigned from his job when it proved a hindrance in his studies. He received training in Hadith from the scholars of Ahl-i Hadith School of Thought and learned Fiqh disciplines from Hanafi scholars. He was trained in Arabic language and literature by Javed Ahmad Ghamidi. He is attached to Al-Mawrid from 1991.

Answered by this author