عورتوں کا اختلاط اورپردہ

سوال:

غامدی صاحب کی رائے یہ ہے کہ سورہ نور میں عورتوں اور مردوں کے ملنے کے آداب بیان کیے گئے ہیں۔ سوال یہ ہے کہ اگر عورتوں کی محفل ہو تو کیا وہاں ان احکامات پر عمل ضروری نہیں۔ کیا شریعت عورتوں کے ملنے پر کسی ادب کی تلقین نہیں کرتی۔


جواب:

قرآن مجید کے احکام کو سمجھنے کے لیے اس نقطے کو پیش نظر رکھنا ضروری ہے کہ یہ دین کی آخری کتاب ہے۔ آخری کتاب کا لفظ نیا نہیں ہے۔ یہ لفظ ہمارے ہاں بہت لکھا اور بولا جاتا ہے اور اس سے ہماری مراد بالعموم یہ ہوتی ہے کہ اب اس کتاب کے بعد آسمان سے کوئی اور کتاب نہیں آنی ہے اور قیامت تک کے لیے یہی اب کتاب ہدایت ہے۔ استاد محترم نے جب یہ بات اپنی کتاب میں لکھی تو اس سے انھوں نے یہ بات واضح کی کہ اسے ملت ابراہیمی کی روایت میں رکھ کر پڑھا جائے گا۔ اسی طرح انھوں نے یہ بات بھی بیان کی ہے کہ بہت سے امور انسانی فطرت میں ودیعت کیے گئے ہیں اور ان فطری امور کے معاملے میں قرآن بلکہ وحی وہیں رہنمائی کرتی ہے جہاں انسان غلطی کر سکتا ہے۔

چنانچہ ہم یہ دیکھتے ہیں کہ ستر یعنی کم ازکم کتنا جسم مردوعورت ہر ایک کے سامنے لازما ڈھکا رہنا چاہیے اصلا قرآن وحدیث میں زیر بحث نہیں ہے۔ اس کی وجہ یہی سمجھ میں آتی ہے کہ فطرت اور دین ابراہیمی کی روایت کی روشنی میں اہل عرب اور یہود ونصاری بالکل صحیح جگہ پر کھڑے تھے۔ قرآن مجید نے اس سے آ‏‏گے کے احکام دے کر اس کی تصویب بھی کر دی ہے۔ اس لیے کہ اگر اس کے معاملے میں کوئی غلطی ہوتی تو قرآن مجید لازما اس کی اصلاح کر دیتا۔

چنانچہ مردوں کا مردوں کے سامنے برہنگی اختیار کرنا اور عورتوں کا عورتوں کے سامنے برہنگی اختیار کرنا جائز نہیں ہے۔ مردوں کا مردوں سے بے حیائی کی باتیں کرنا اور عورتوں کا عورتوں سے بے حیائی کی باتیں کرنا جائز نہیں ہے۔ عورتوں کا سر کو معمول میں ڈھانک کر رکھنا وغیرہ وہ امور ہیں جو پیغمبروں کی رائج کردہ معاشرت کے مسلمات ہیں۔

رہا آپ کا سوال تو اس کا ایک پہلو سے جواب اس تفصیل میں آگیا ہے۔ لیکن خود سورہ نور کے احکام میں بھی اس کا اشارہ موجود ہے۔ انھی احکام میں عورتوں کو اظہار زینت سے روکا گیا ہے۔ اور اس حوالے سے ایک محدود دائرے کا استثنا بھی بیان کیا گیا ہے۔ اس استثنا میں میل جول کی عورتیں بھی شامل ہیں۔ اس نکتے کی وضاحت کرتے ہوئے استاد محترم نے لکھا ہے:

" اپنے میل جول اور تعلق وخدمت کی عورتیں

اس سے واضح ہے کہ اجنبی عورتوں کو بھی مردوں کے حکم میں سمجھنا چاہیے اور ان کے سامنے بھی مسلمان عورتوں کو اپنی چھپی ہوئی زینت کے معاملے میں محتاط رہنا چاہیے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ عورتوں کے صنفی جذبات بھی بعض عورتوں سے متعلق ہوجاتے ہیں۔ اسی طرح یہ بھی ہوتا ہے کہ ان کے محاسن سے متاثر ہو کر وہ مردوں کو ان کی طرف اور ان کو مردوں کی طرف مائل کرنے کا ذریعہ بن جاتی ہیں۔ " (میزان، ص 466)

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Mr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.
He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.
During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Islamic Centre of Al-Mawrid).
In 1992, Mr Gazdar was introduced to Farahi school of thought his first meeting with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.
In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid in Lahore, Pakistan and completed it with top position in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid as an associate fellow in research and education in 2002 and is working in this capacity ever since. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants orally and gave answers for Al-Mawrid’s official website too.
In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia. In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with a CGPA: 3.92.
Mr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored some articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). An online book is going to be published at the official website of International Islamic University Malaysia in 2018 (Arabic language) and his Masters dissertation is also going to be published in the form of a book in 2018 (Arabic language) from Dar al-Kutub al-‘Ilmiyyah, Beirut Lebanon.
Nowadays, Mr Gazdar is a PhD candidate in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia. His ongoing PhD research is a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of “Hijab and Gender Interaction in the light of the Quran and Hadith.”
Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.
Moreover, Mr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at the King Haji Ahamd Shah mosque of International Islamic University Malaysia from 2013 to 2015 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years (2013-2016). Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as an Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author