حديث ” رؤيا المؤمن جزء من ستۃ و اربعين جزء من النبوۃ ” اور مرزا کي نبوت

سوال:

بخاري كي حديث ميں ہے: "رؤيا المؤمن جزء من ستة و اربعين جزء من النبوة" مرزائي اس قسم کي روايات مرزا کي نبوت کی دليل ميں پيش کرتے ہيں اور کہتے ہيں کہ حديث سے ثابت ہوتا ہے کہ جزوي نبوت جاري ہے۔ اس راۓئے اور حديث کے بارے ميں آپ کا کيا خيال ہے؟


جواب:

نبوت خدا کي طرف سے ہدايت پا کر انسانوں کي رہنمائي کا منصب ہے۔ ختم نبوت کے لفظ سے قرآن مجيد ميں يہ بات واضح کر دي گئي ہے کہ نبوت کے ذريعے سے رہنمائي کا يہ سلسلہ ختم ہو گيا ہے۔ آپ نے جو روايت نقل کي ہے اس ميں خواب کو نبوت کا چھیاليسواں حصہ کہا گيا ہے۔ ايک دوسري روايت ميں آپ نے يہي بات " لم يبق من النبوۃ الا المبشرات" کے الفاظ ميں بيان کي ہے۔ مبشرات کے لفظ سے واضح ہے کہ يہ خواب کسي ديني رہنمائي کا ذريعہ نہيں ہوتے بلکہ روز مرہ کي زندگي کے متعلق ہوتے ہيں۔ مرزا صاحب کي نبوت اللہ تعالي سے باقاعدہ وحي پانے کا دعوي ہے۔ اس کے ليے اس طرح کے کمزور دلائل سے استشہاد قابل قبول نہيں ہے۔ محمد بن عبد اللہ صلي اللہ عليہ وسلم اپنے امتيوں کو کسي ابہام ميں چھوڑ کر نہيں گئے۔ يہ امت ہميشہ سے بغير کسي اختلاف کے اس عقيدے پر قائم ہے کہ اب کسي نبي کے آنے کا کوئي امکان نہيں ہے۔ کسي نئي نبوت کو ماننا قرآن مجيد کي صريح نص کے خلاف ہے۔ خواب سے متعلق ان روايات کو قرآن مجيد کے لفظ ختم نبوت کے تحت رکھ کر سمجھا جائے گا۔ اس کا کوئي ايسا مطلب نہيں ليا جا سکتا جس سے ختم نبوت کے صريح معني کي نفي ہوتي ہو۔

answered by: Talib Mohsin

About the Author

Talib Mohsin


Mr Talib Mohsin was born in 1959 in the district Pakpattan of Punjab. He received elementary education in his native town. Later on he moved to Lahore and passed his matriculation from the Board of Intermediate and Secondary Education Lahore. He joined F.C College Lahore and graduated in 1981. He has his MA in Islamic Studies from the University of Punjab. He joined Mr Ghamidi to learn religious disciplines during early years of his educational career. He is one of the senior students of Mr Ghamidi form whom he learnt Arabic Grammar and major religious disciplines.

He was a major contributor in the establishment of the institutes and other organizations by Mr Ghamidi including Anṣār al-Muslimūn and Al-Mawrid. He worked in Ishrāq, a monthly Urdu journal, from the beginning. He worked as assistant editor of the journal for many years. He has been engaged in research and writing under the auspice of Al-Mawrid and has also been teaching in the Institute.

Answered by this author