حفظِ قرآن کی فضیلت

سوال:

ہم یہ بات اپنے علما سے بچپن سے سنتے چلے آرہے ہیں کہ دین میں قرآن کریم کو حفظ کرنے کی فضیلت اتنی زیادہ ہے کہ حافظِ قرآن کے اہل خانہ اُس کی سفارش سے جنت میں داخل کردیے جائیں گے،اگرچہ وہ دوزخ کے مستحق ہی کیوں نہ ہوں۔ معلوم یہ کرنا ہے کہ دین میں حفظِ قرآن کی اِس غیر معمولی فضیلت کا اصل ماخذ اور حیثیت کیا ہے ؟ اور کیا واقعتا یہ دین میں ثابت بھی ہے؟


جواب:

بنیادی طور پر یہ بات واضح رہے کہ کتاب اللہ کی حیثیت سے قرآن مجید کو پڑھنا، سیکھنا اوراُسے حفظ کرلینا بلاشبہ دین میں بڑی اہمیت کا حامل اور بجائے خود ایک باعثِ اجر وفضیلت عمل ہے۔ پھر آدمی اللہ کی کتاب کو سمجھے اوراُس سے ہدایت حاصل کرے تو یہ اصل مطلوب ہے۔ کتاب اللہ کو سینوں میں محفوظ کرلینا مسلمانوں کی ایک ایسی غیر معمولی روایت ہے جو اِس صحیفۂ خداوندی کی حفاظت کا ایک بڑا ذریعہ ہے۔

جہاں تک حفظِ قرآن کی اِس فضیلت کا تعلق ہے کہ جو شخص محض اِسے حفظ کرلے تو آخرت میں اُس حاملِ قرآن کا تنہا یہ عمل اُس کی اور اُس کے اہل خانہ کی نجات کا یقینی ذریعہ بن جائے گا؛تو یہ مقدمہ جاننا چاہیے کہ محلِ نظر ہے۔ اِس کی وجہِ شہرت اور ماخذ اِس مضمون پر مشتمل ایک روایت ہے جو حدیث کی بعض کتابوں میں سیدنا علی رضی اللہ عنہ کی نسبت سے نقل ہوئی ہے۔جس کا ترجمہ حسبِ ذیل ہے :

"رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : جس شخص نے قرآن سیکھا ،اُسے اپنے سینے میں محفوظ کرلیا اور پھر اُس کی حفاظت کی اور یاد رکھا تو اللہ تعالٰی اُسے جنت میں داخل کریں گے۔اور اُس کی سفارش اُس کے اُن دس اہل خانہ کے بارے میں قبول کریں گے جن سب پر آگ واجب ہوچکی ہوگی "۔

بعض طرق میں صاحب قرآن کے کتاب اللہ کو اپنے سینے میں محفوظ رکھنے کے ساتھ یہ شرط بھی بیان ہوئی ہے کہ وہ اِس کتاب کے حلال کو اپنے لیے حلال اور حرام کو حرام رکھے۔۔۔الخ۔

یہ روایت الفاظ کے معمولی فرق کے ساتھ مسند احمد(رقم:1278،1268)،جامع ترمذی (رقم:2905)،سنن ابن ماجہ(رقم:216)،اور شعب الایمان(رقم:2460،1799،1798) میں نقل ہوئی ہے۔

جہاں تک اِس روایت کی سَندی حیثیت کاتعلق ہے توواقعہ یہ ہے کہ اِن تمام مصادر میں مذکور اِس روایت کی کوئی ایک سند بھی ثابت نہیں ہوتی۔اِس کی تمام اسانید انتہائی "ضعیف" درجے کی ہیں۔ تحقیقِ سند کے اعتبار سے سب کے سب ناقابل اعتبار ہیں۔زیادہ تر اسانید میں ایک راوی جو علماے رجال کے نزدیک نہایت ضعیف اور "متروكالحدیث" ہے اورجس پر حدیثیں گھڑنے کا الزام بھی ہے ؛وہ "ابو عمر حفص بن سلیمان الاسدی" ہے جو اِس روایت کے اکثر طرق میں موجود ہے۔ اِس راوی کی سند میں موجودگی ہی روایت کو ناقابل اعتبار قرار دینے کے لیے کافی ہے۔بیہقی کی سند میں ایک راوی "سلم بن سالم بلخی"بھی ضعیف الحدیث ہے۔ اِسی طرح اِن تمام اسانید میں متعدد رواۃ "مجهول الحال" اور "ضعیف" ہیں۔جیسے ترمذی ،ابن ماجہ اور بیہقی کی اسانید میں "کثیر بن زاذان" مجہول الحال اور امام احمد کے طریق میں "عمرو بن عثمان الکلابی" ضعیف الحدیث ہے۔امام ترمذی نے اِس روایت کو ذکر کرنے کے بعد خود اِسے "غریب" قرار دیتے ہوئے فرمایا ہے کہ اِس روایت کی کوئی سند بھی صحت کو نہیں پہنچتی۔(سنن الترمذی،5/171۔رقم:2905)

معاصر عالم و محدث شیخ شعیب الارناؤوط نے مسند احمد اور ابن ماجہ پر اپنی تحقیق میں بھی اِس روایت کو نہایت ضعیف قرار دیا ہے۔(ابن ماجہ بتحقیق الشیخ الارناؤوط وآخرون ،1/146۔174۔مسند الامام احمد بتحقیق الشیخ الارناؤوط، رقم:1277،1267)

اسی طرح امام حدیث شیخ ناصرالبانی نے ترمذی اورابن ماجہ پر اپنی تحقیق میں بھی اِسے نہایت ضعیف قرار دیا ہے۔(سنن ابن ماجہ بتحقیق الشیخ الالبانی ،رقم :216۔صحیح وضعیف سنن الترمذی ،البانی ،رقم:2905)

غرضیکہ سند کے اعتبار سے موضوع ِبحث روایت غیر ثابت شدہ ہے۔چنانچہ اِس کی کوئی حیثیت نہیں ہے۔نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے اِس کا استناد قطعا ثابت نہیں ہوتا۔ اِسے آپ کی نسبت سے بیان کرنا درست ہے،نہ اِس کی بنیاد پر کوئی فضیلت ہی مانی جاسکتی ہے۔

پھر اِس روایت کا مضمون چونکہ قرآنِ مجید میں مذکور نجاتِ آخرت کی صریح شرائط سے بھی متصادم ہے،چنانچہ اِس خبر واحد کی کوئی سند فرض کر لیا جائے کہ ثابت بھی ہوتی،تب بھی درایتِ متن کے لحاظ سے بھی یہ روایت کسی طرح قابل قبول نہیں ہوسکتی تھی۔

اِس تفصیل سے ثابت ہوا کہ حفظِ قرآن کی فضیلتِ مسئولہ کی کوئی دینی حیثیت نہیں ہے۔

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Dr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.

He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.

During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Dawah Centre of Al-Mawrid Foundation).
In 1992, Dr Gazdar was introduced to Farahi school of thought when first time met with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi (a renowned Islamic scholar) and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.

In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid foundation in Lahore and he completed it with top position in the batch in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid foundation as an associate fellow in research and education in 2002 and worked in this capacity until December 2018. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants verbally and wrote many answers for foundation’s official website too.

In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia (IIUM). In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with the GPA: 3.92.

Dr Amir started his Ph.D programme in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia (IIUM) in February 2015 and completed it with distinction on 25th March 2019. His Ph.D research topic was a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of Hijab and Gender Interaction in the light of Quranic and Hadith texts.

In December 2018, he has been appointed at Al-Mawrid Foundation as Fellow of research and education.

Dr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored several articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). His two research books have been in Malaysia and Lebanon in 2019 (Arabic language).

Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.

Moreover, Dr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at Sultan Haji Ahmad Shah mosque of International Islamic University Malaysia (IIUM) from 2013 to 2016 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years. Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as a volunteer Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author