عشا میں وتر پڑھنا

سوال:

کیا عشا میں وتر پڑھنا ضروری ہیں؟


جواب:

وتر کی نماز اصل میں تہجد کی نماز ہے۔ تہجد کی نماز نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے لیے فرض تھی اور باقی مسلمانوں کے لیے نفل نماز ہے۔ اس کا اصل وقت طلوع فجر سے پہلے کا ہے۔ یہ نماز طاق پڑھی جاتی ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے اس کی زیادہ سے زیادہ رکعتیں گیارہ پڑھی ہیں۔نفل ہونے کے باوجود صحابہ یہ نماز پڑھتے تھے۔ حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے ایک موقع پر فرمایا کہ اگر تمھیں اندیشہ ہو کہ صبح اٹھ نہیں سکو گے تو اسے سونے سے پہلے پڑھ لو۔ طاق کرنے کے لیے عربی لفظ وتر ہے اور اس کی کم از کم تین رکعت پڑھی جا سکتی ہیں، اس وجہ سے عشا کے ساتھ پڑھی جانے والی تین رکعت وتر کہلانے لگیں۔


حضور کی اسی تاکید کی وجہ سے مسلمان اس کا خاص اہتمام کرتے ہیں۔ کسی بھی فقیہ نے اسے فرض قرار نہیں دیا۔ بہتر یہی ہے کہ اس کا اہتمام کیا جائے ۔ تہجد اپنے اصل وقت نہ سہی عشا کے ساتھ توبآسانی پڑھی جا سکتی ہے۔

answered by: Talib Mohsin

About the Author

Talib Mohsin


Mr Talib Mohsin was born in 1959 in the district Pakpattan of Punjab. He received elementary education in his native town. Later on he moved to Lahore and passed his matriculation from the Board of Intermediate and Secondary Education Lahore. He joined F.C College Lahore and graduated in 1981. He has his MA in Islamic Studies from the University of Punjab. He joined Mr Ghamidi to learn religious disciplines during early years of his educational career. He is one of the senior students of Mr Ghamidi form whom he learnt Arabic Grammar and major religious disciplines.

He was a major contributor in the establishment of the institutes and other organizations by Mr Ghamidi including Anṣār al-Muslimūn and Al-Mawrid. He worked in Ishrāq, a monthly Urdu journal, from the beginning. He worked as assistant editor of the journal for many years. He has been engaged in research and writing under the auspice of Al-Mawrid and has also been teaching in the Institute.

Answered by this author