خواجہ سراؤں کے بار ے میں قرآن کیا کہتا ہے ؟

سوال:

قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے بہت واضح الفاظ میں فرمایا ہے کہ دنیا میں ہر مخلوق کو جوڑے کی صورت میں پیدا کیا گیاہے ۔ اِس میں جانور ، انسان ،حتی کہ نباتات تک شامل ہیں۔میرا سوال یہ ہے کہ اتنی بڑی قوم کی صورت میں' خواجہ سرا' ہمارے معاشرے میں زندگی بسر کر رہے ہیں۔اُن کی زندگی پر میڈیا مختلف ڈرامے پیش کرتا ہے۔لوگ اپنی خوشی کی محفلوں میں اُن کو تفریح کے لیے بلاتے ہیں یا یہ خود پہنچ جاتے ہیں۔کوئی اِن پر ہنستا ہے،کوئی اِن سے لطف اٹھاتا ہے توکوئی اِن پر ترس کھاتا ہے۔ایک ایسی مخلوق جسے انسانی معاشرہ کوئی مقام دینے کو تیار نہیں ہے،کیا قرآن یا حدیث میں اِس کا کوئی ذکر یا حوالہ موجود ہے؟یہاں آکر میری سوچ رک جاتی ہے۔میری ناقص معلومات میں اِس مخلوق کا کوئی ذکر اسلامی نقطہ نظر سے میری معلومات میں نہیں ہے۔برائے کرم کیا آپ میری معلومات میں اضافہ کریں گے ؟


جواب:

پہلی بات تو بجا طور پر درست ہے کہ قرآن مجید میں اللہ تعالیٰ نے واضح طور پر فرمایا ہے کہ : 

وَمِنْ کُلِّ شَیْءٍ خَلَقْنَا زَوْجَيْنِ لَعَلَّکُمْ تَذَکَّرُوْنَ۔ ''

اور ہم نے ہر چیز کے جوڑے بنائے ہیں تاکہ تم (اِس حقیقت کی )یاد دہانی حاصل کرو (کہ اِس دنیا کا بھی ایک جوڑا ہونا چاہیے)''(الذاریات 51:49) ۔

 مخلوقاتِ دنیا کی تخلیق میں یہ اللہ تعا لیٰ کے عمومی اُصول کا بیان ہے ۔تاہم،جیساکہ آگے واضح ہوگا، ہمارے نزدیک اِس بات کا سائل کے اصل سوال سے براہ راست کوئی تعلق نہیں ہے۔

جہاں تک خواجہ سراؤں کے بارے میں اصل سوال کا تعلق ہے تو پہلی بات تو یہ واضح رہے کہ اُنہیں کسی ' قوم' کا عنوان دیا جاسکتا ہے،نہ اُنہیں کوئی الگ 'مخلوق' ہی شمار کیا جاسکتا ہے؛ جیساکہ خود سائل کے الفاظ سے بظاہر معلوم ہوتا ہے۔ہمارے نزدیک یہ دونوں ہی عنوانات خواجہ سراؤں کے لیے مناسب نہیں ہیں۔نہ وہ کوئی الگ' مخلوق' ہیں اور نہ ہی کوئی ' قوم'۔وہ انسان ہی ہیں۔خلقی اوصاف کے اعتبار سے اُن میں سے بعض کامل مردانہ اوصاف سے محروم ہوتے ہیں اور بعض زنانہ اوصاف سے۔یہ اُن کی تخلیق کا وہ نقص ہے جو اُن کے خالق اور پروردگار نے اُن میں ایسے ہی رکھا ہے جیسا کہ بعض انسانوں کو ہم خلقی اعتبار سے بعض دوسرے اعضا سے پیدایشی طور پر معذور پاتے ہیں۔اُن کے اور اِن کے مابین فرق محض ناقص اعضا کے اختلاف کاہے ۔

یہ خوا جہ سراآج کی دنیا ہی میں پیدا نہیں ہوئے ہیں،بلکہ ماضی میں بھی ایسے خوا جہ سرا انسانوں کے مابین پیدا ہوتے رہے ہیں۔ بعض روایتوں میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے عہد میں بھی ایسے بعض ناقص مردوں اور عورتوں کے وجود کا تذکرہ ملتا ہے۔

مجید میں خوا جہ سراؤں کا براہ راست کوئی تذکرہ نہیں ہے۔ اور یہ تذکرہ نہ ہونا قرآن اور اُس کی دعوت میں کوئی نقص واقع نہیں کرتا۔یہ بالکل ایسے ہی ہے جیسے کہ قرآن میں پیدایشی نابینا انسانوں کا کوئی تذکرہ نہیں ہے؛سماعت سے معذور افراد کا کوئی تذکرہ نہیں ہے؛ ہاتھوں سے معذور پیدا ہونےوالے انسانوںکا بھی کوئی تذکرہ نہیں ہے۔۔۔۔وغیرہ۔ اِس طرح کے انسانوں کی یہ معذوری ہی ہے جس کی وجہ سے اِنسانی معاشرہ بالعموم انہیں دوسرے درجے کا انسان سمجھتا ہے ۔

دنیا اور اُس کی مخلوقات میں اِس طرح کے بعض نقائص جو اللہ تعالیٰ نے رکھے ہیں، یہ ظاہر ہے کہ آزمائش کے اُصول پر رکھے ہیں۔ایسے اِنسان جو کسی اعتبار سے معذور پیدا کئے گئے ہیں،وہ اگر خود کامل عقل وشعور رکھتے ہیں تو اُن کا امتحان ، اِس دنیا میں صبر کا امتحان ہے؛ دوسرے اِنسانوں کے لیے یہاں اُن کو دیکھ کر اپنے پروردگار کی شکرگزاری بجالانے کا امتحان ہے ،اور تمام اِنسانیت کے لیے ایک عمومی درس اِس طرح کے نقائص کے وجود میں یہ ہے کہ یہ دنیا اپنی تمام تر خوبیوں ، خصائص اور نعمتوں کے باوجود بہر حال دار النقائص ہے،دار الکمال نہیں ہے ۔

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Dr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.

He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.

During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Dawah Centre of Al-Mawrid Foundation).
In 1992, Dr Gazdar was introduced to Farahi school of thought when first time met with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi (a renowned Islamic scholar) and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.

In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid foundation in Lahore and he completed it with top position in the batch in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid foundation as an associate fellow in research and education in 2002 and worked in this capacity until December 2018. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants verbally and wrote many answers for foundation’s official website too.

In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia (IIUM). In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with the GPA: 3.92.

Dr Amir started his Ph.D programme in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia (IIUM) in February 2015 and completed it with distinction on 25th March 2019. His Ph.D research topic was a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of Hijab and Gender Interaction in the light of Quranic and Hadith texts.

In December 2018, he has been appointed at Al-Mawrid Foundation as Fellow of research and education.

Dr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored several articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). His two research books have been in Malaysia and Lebanon in 2019 (Arabic language).

Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.

Moreover, Dr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at Sultan Haji Ahmad Shah mosque of International Islamic University Malaysia (IIUM) from 2013 to 2016 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years. Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as a volunteer Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author