کرائے اور بینک کے منافع میں فرق

سوال:

اگر ایک شخص 20 لاکھ روپے کا مکان خرید کر کرائے پر چڑ ھادیتا ہے اور دوسرا شخص 20 لاکھ روپے بینک میں ڈیپوزٹ کرا کر پروفٹ لیتا ہےتو کیا دونوں صورتوں میں ان کو ملنے والی رقم سود ہو گی؟


جواب:

آپ کے سوال سے یہ محسوس ہوتا ہے کہ آپ کرایہ کی آمدنی اور بینک سے ملنے والے سود کا فرق سمجھنا چاہتے ہیں۔ بینک سے تو بلاشبہ سود ہی ملتا ہے ۔البتہ کرایہ سود نہیں ہے ۔ اس کا سبب یہ ہے کہ سود وہ اضافی رقم ہے جو کسی شخص نے آپ کی رقم کی واپسی کے بعد ادا کرنی ہوتی ہے ۔ اس میں غور فرمائیے کہ پیسہ خرچ (Consume) ہوجاتا ہے۔ واپس ادا کرنے والے کو وہ پیسہ پھر سے پیدا کرنا ہوتا ہے اور اس پر ایک اضافی رقم بطور سود بھی دینی ہوتی ہے۔ جبکہ کرایہ میں اصل شے محض استعمال ہوتی ہے ، خرچ (Consume) نہیں ہوتی کہ اسے دوبارہ پیدا کرنا ہو ، بلکہ استعمال کے بعد لوٹادی جاتی ہے ۔ اوراستعمال کی سہولت لینے کے عوض کچھ رقم بطور کرایہ ادا کی جاتی ہے ۔

سود میں پیسہ یا کسی اور قابل صرف(Consumable) چیزکو دوبارہ پیدا کر کے اس کے ساتھ اضافی طور پر رقم دینی ہوتی ہے ۔ یہی چیز اس کوظلم بناتی ہے اور اسی لیے سود ممنوع ہے ۔ کرایہ میں ، جیسا کہ ہم نے واضح کیا، ایسا نہیں ہوتا۔

answered by: Rehan Ahmed Yusufi

About the Author

Rehan Ahmed Yusufi


Mr Rehan Ahamd Yusufi started his career as a teacher and an educationist after obtaining Masters Degrees in Islamic Studies and Computer Technology from the Karachi University with distinction. He started his professional career by serving as a system analyst in a commercial organization. In 1997 he joined service in Saudi Arabia and later immigrated to Canada. 

Mr Rehan Ahmad Yusufi has been attached to people of learning from the beginning of his education career. In 1991, he was introduced to Mr Javed Ahmad Ghamid, a Pakistani religious scholar. After his return from Canada in 2002, Mr Yusufi joined Al-Mawrid, a Foundation for Islamic Research and Education, founded by Mr Ghamidi. Presently Mr Yusufi is an Associate Fellow at Al-Mawrid. His job responsibilities include propagation and communication of the religion as well as religious and moral instruction of people. He is heading a training center in Karachi which offers moral training and religious education to the masses.

Mr Rehan Ahamd Yusufi has very important works and booklets to his credit. The most important of his works include Maghrib sai Mashriq Tak, Urooj-o-Zawaal ka Qanoon awr Pakistan, and Wuhi Rah Guzar. He is also the Chief Editor of the Da’wah edition of the monthly Ishraq published from Karachi. The journal is also published online on its site http://www.ishraqdawah.com

Answered by this author