کیا صرف دو نمازیں بھی کافی ہیں؟

سوال:

جعفر شاہ پھلواری کی کتاب''ریاض السنہ'' میں ایک حدیث ہے کہ دو نمازیں بھی جو شخص پڑھ لے تو کافی ہیں۔ اس طرح کی دو تین اور بھی حدیثیں درج ہیں،ان احادیث کی حقیقت کیا ہے جبکہ تمام مسلمانوں کا پانچ نمازوں پر اتفاق ہے؟


جواب:

میں نے ''ریاض السنہ'' کا متعلقہ حصہ دیکھا ہے۔ بظاہر یہ معلوم ہوتا ہے کہ عصر اور فجر کی نماز کی طرف خصوصی توجہ دلانا ہی مقصود ہے۔ اگر روایات کو اسی معنی میں سمجھا جائے تو یہ بات درست ہے، اس لیے کہ یہ دونوں نمازیں زیادہ غفلت کا شکار ہوتی ہیں۔ آپ نے روایات سے جو معنی اخذ کیے ہیں، الفاظ کی حد تک ان کی نفی کرنا ممکن نہیں، لیکن پانچ نمازیں جس قطعیت کے ساتھ ثابت ہیں اور ان کی فرضیت جس طرح ہر شک وشبے سے بالا ہے، روایت کے یہ معنی قطعی طور پر ناقابل قبول ہیں۔ ہمارے لیے اس کے سوا کوئی چارہ نہیں کہ ہم راوی کو قصور وار ٹھہرائیں کہ اس نے بات صحیح طریقے سے بیان نہیں کی۔

answered by: Talib Mohsin

About the Author

Talib Mohsin


Mr Talib Mohsin was born in 1959 in the district Pakpattan of Punjab. He received elementary education in his native town. Later on he moved to Lahore and passed his matriculation from the Board of Intermediate and Secondary Education Lahore. He joined F.C College Lahore and graduated in 1981. He has his MA in Islamic Studies from the University of Punjab. He joined Mr Ghamidi to learn religious disciplines during early years of his educational career. He is one of the senior students of Mr Ghamidi form whom he learnt Arabic Grammar and major religious disciplines.

He was a major contributor in the establishment of the institutes and other organizations by Mr Ghamidi including Anṣār al-Muslimūn and Al-Mawrid. He worked in Ishrāq, a monthly Urdu journal, from the beginning. He worked as assistant editor of the journal for many years. He has been engaged in research and writing under the auspice of Al-Mawrid and has also been teaching in the Institute.

Answered by this author