کیا تخلیقِ کائنات کی وجہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہیں ؟

سوال:

کیا نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو نور سے پیدا کیا گیا ؟کیا تخلیقِ کائنات کی وجہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم ہیں ؟


جواب:

قرآنِ مجید میں بلا شبہ اللہ تعالٰی نے محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو اُن کے منصبِ نبوت کے اعتبار سے "سراج منیر" یعنی ایک روشن چراغ قرار دیا ہے ۔ (احزاب33:46) جس کے معنی محض یہ ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے آپ کو ایسا روشن چراغ بنایا جو خود بھی اُس کی ہدایت اور علم وحکمت سے منوّر ہے اور لوگوں کو بھی تاریکیوں سے نکال کر اللہ کی صراط مستقیم کی طرف لانے کے لیے ایک راہنما کی حیثیت رکھتا ہے ۔

دوسرے لفظوں میں یوں سمجھیے کہ اللہ کا دین انسانیت کے لیے اِس دنیا میں اُس کی ہدایت ہے ، چنانچہ یہ ہدایت بے شک انسان کے لیے نور اور روشنی ہے ۔ اور اِس نور کا ماخذ ومرجع انسانیت کے لیے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی ذاتِ والا صفات ہے ۔ چونکہ اللہ کی ہدایت کا نور انسانیت کو آپ ہی کی وساطت سے ملا ہے ، چنانچہ اِس حیثیتِ رسالت سے تو بہر حال آپ کو "نور" کہا جاسکتا ہے ۔

تاہم یہ بات کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم اپنی ذات کے اعتبار سے ایک بشر تھے ، بشر ہی طرح آپ کی ولادت ہوئی اور بشر ہی کی حیثیت سے اِس دنیا میں آپ نے زندگی بسر کی ؛ اِس کے شواہد قرآن مجید اور مسلّمہ تاریخ میں پوری صراحت کے ساتھ جگہ جگہ دیکھے جاسکتے ہیں ۔

جہاں تک بعض مسلمان معاشروں کے اِس عامیانہ اعتقاد کا تعلق ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو "نور" سے تخلیق کیا گیا تھا ، وہ اللہ کے نور میں سے ایک نور تھے ، تو یہ ایک طرف قرآن کے صریح خلاف ہے اور دوسری طرف اِس بات کی کوئی بنیاد کسی مستند ماخذ میں موجود نہیں ہے ۔

اِس کے حق میں دلیل کے طور پر جو کچھ بیان کیا جاتا ہے ، وہ مندرجہ ذیل بعض ایسی ناقابلِ اعتبار ، بے بنیاد اور من کھڑت روایات ہیں ، جنہیں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کا استناد ، چونکہ کسی قابلِ اعتماد ذریعے سے حاصل ہی نہیں ہے ، چنانچہ اُن کی بنیاد پر اِس طرح کا کوئی اعتقاد دین میں سرے سے ثابت ہی نہیں ہوتا ۔ اور نہ اِس طرح کی روایتیں مسلمانوں کے لیے قابل التفات ہی ہیں ۔ وہ روایات یہ ہیں :

1۔ حدیث کی حیثیت سے ایک روایت یہ بیان کی جاتی ہے کہ "نبی صلی اللہ علیہ وسلم کو نور سے پیدا کیا گیا ہے" ۔

یہ ایک باطل اور بے بنیاد روایت ہے ۔ علم کی دنیا میں اِس کی کوئی حقیقت نہیں ہے ۔ اِس کے ماخذ کے طور پر بعض لوگ مسند احمد کا اور بعض مصنف عبد الرزاق کا حوالہ دیتے ہیں ؛ جو کسی بھی لحاظ سے درست نہیں ہے ۔ محقق بات یہی ہے کہ اِس حدیث کا کوئی ماخذ ہی نہیں ہے ۔

2۔ دوسری روایت یہ بیان کی جاتی ہے کہ " اللہ تعالٰی نے سب سے پہلے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے نور کو پیدا کیا یا یہ کہ اللہ نے اپنے چہرے کے نور سے ایک مٹھی بھر نور لیا اور اُس نور کی یہ مٹھی محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہی تھے ۔ پھر اللہ تعالٰی نے اُس مٹھی بھر نور کی طرف نظر کی تو اُس میں کچھ قطرے بن گئے ۔ پھر ہر قطرے سے ایک نبی کو پیدا کیا ، یا (یوں کہیے کہ اِس طرح اپنی)تمام خلق کو اللہ تعالٰی نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے نور سے پیدا کیا ۔

اِس باب میں یہ اور اِس طرح کی دیگر روایات کی حقیقت بھی بالکل وہی ہے جو پہلی روایت کی ہے ۔ لہذا اِس پر اب مزید کچھ کہنے کی گنجایش بھی باقی نہیں رہ جاتی ۔ امام ابن تیمیہ اس روایت کے بارے میں فرماتے ہیں کہ یہ اُن روایتوں میں سے ہے کہ جن کے من گھڑت اور جھوٹے ہونے پر حدیث کی معرفت رکھنے والوں اور اہل علم کا اتفاق ہے ۔(مجموع الفتاوی،18/357-366)

اِس موضوع کے علاوہ سائل نے اپنے سوال میں ایک دوسری روایت کے بارے میں بھی پوچھا ہے کہ جس میں اللہ تعالٰی کی زبانی یہ بیان کیا گیا ہے کہ " اے محمد ! اگر تو نہ ہوتا تو میں کائنات کو تخلیق ہی نہ کرتا "۔

اِس حدیث کے بارے میں یہ بات جان لینی چاہیے کہ یہ اور اِسی معنی ومفہوم پر مبنی مندرجہ ذیل بعض روایات اور بھی ہیں ، جن سب کا شمار باطل اور موضوع روایات ہی کے زمرے میں ہوتا ہے ۔ چنانچہ یہ واضح رہے کہ اِس باب کی روایتوں کی بنیاد پر بعض لوگ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے بارے میں جو کچھ ثابت کرنے کی کوشش کرتے ہیں ، اِن میں در حقیقت اُس کے اثبات کی صلاحیت ہی موجود نہیں ہے ۔ تحقیق کی نگاہ سے دیکھا جائے تو یہ احادیث در حقیقت سند اور درایت ، ہر اعتبار سے نا قابل التفات ہیں ۔ اِن کی بنیاد پر کوئی دینی مقدمہ قطعاً ثابت نہیں کیا جاسکتا ۔

یہ روایت اوپر بیان کیے گئے الفاظ کے ساتھ امام شوکانی نے اپنی کتاب "الفوائد المجموعۃ فی الاحادیث الموضوعۃ" میں نقل کر کے امام صغانی کی یہ رائے بیان کی ہے کہ یہ ایک "موضوع" اور من گھڑت روایت ہے ۔ (ص326)

اِس کے بارے میں محدث العصر شیخ البانی کی بھی یہی رائے ہے ۔ وہ مزید فرماتے ہیں کہ اِسی طرح کی ایک مرفوع روایت دیلمی نے حضرت ابن عباس سے اس طرح نقل کی ہے :

" ایک مرتبہ جبریل علیہ السلام میرے پاس آئے اور فرمایا : اے محمد ! اگر تو نہ ہوتا تو میں جنت کو تخلیق نہ کرتا ، اگر تو نہ ہوتا تو میں دوزخ کو بھی تخلیق نہ کرتا ۔ ابن عساکر کی روایت کے الفاظ ہیں : اگر تو نہ ہوتا تو میں دنیا ہی کو تخلیق نہ کرتا ۔ اس روایت پر بھی کلام کر کے امام البانی نے یہ بات ثابت کردی ہے کہ یہ بھی منجملہ واہی روایات ہے ۔ (سلسلۃ الاحادیث الضعیفۃ والموضوعۃ ، رقم 282)

اِسی موضوع سے متعلق ایک روایت سیدنا ابن عباس ہی سے حاکم نے مستدرک میں اِس طرح نقل کی ہے :

" اللہ تعالٰی نے عیسی علیہ السلام کو وحی کی اور فرمایا : اے عیسی ! محمد پر ایمان لاؤ ، اور اپنی اُمت کے اُن لوگوں کو جو محمد کو اپنے حین حیات پائیں گے؛اُن کو بھی محمد پر ایمان لانے کا حکم دو ، کیونکہ اگر محمد نہ ہوتے تو میں آدم ہی کو پیدا نہ کرتا ، اگر محمد نہ ہوتے تو میں جنت اور دوزخ کی تخلیق بھی نہ کرتا ۔ میں نے پانی پر اپنا عرش بنایا تو وہ ہلنے لگا ، چنانچہ جب میں نے اُس پر " لا الٰہ اللہ ، محمد رسول اللہ " لکھا تو وہ اپنی جگہ پر ٹھیر گیا " ۔

حاکم کی اِس روایت کو امام ذھبی " موضوع " قرار دیا ہے ۔(مستدرک حاکم2/671 )

شیخ البانی فرماتے ہیں : یہ ایک بے بنیاد روایت ہے ۔ (سلسلۃ الاحادیث الضعیفۃ والموضوعۃ ، رقم 280)

ایک روایت سیدنا عمر سے یہ بیان کی گئی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا :

" جب آدم سے لغزش ہوئی تو اُنہوں نے کہا : اے پروردگار! میں محمد کے واسطے سے تجھ سے مغفرت طلب کرتا ہوں ۔ اِس پر اللہ تعالٰی نے فرمایا : اے آدم ! تو محمد کو کیسے جانتا ہے ، دراں حالیکہ ابھی تو میں نے اُسے پیدا بھی نہیں کیا ؟ تب آدم نے کہا : اے میرے رب ! تونے جب مجھے اپنے ہاتھ سے تخلیق کر کے مجھ میں اپنی روح پھونکی تو میں نے اپنا سر اُٹھایا اور تیرے عرش کے پایوں پر لکھا ہوا پایا کہ : " لا الٰہ اللہ ، محمد رسول اللہ "،چنانچہ اِس سے میں نے جان لیا کہ جس کا نام تو نے اپنے نام کے ساتھ ملایا ہے وہ ضرور تیری مخلوق میں سے تجھے سب سے زیادہ محبوب ہوگا ۔ اِس پر اللہ تعالٰی نے فرمایا : تو نے سچ کہا ہے ، اے آدم ! ، وہی میری خلق میں میرا سب سے زیادہ محبوب ہے ۔ اور تو نے چونکہ اُس کے واسطے سے مغفرت مانگی ہے ؛ تَو جا میں نے تجھے بخش دیا ۔ اگر محمد نہ ہوتا تو میں تجھے پیدا ہی نہ کرتا " ۔ (مستدرک حاکم ، رقم 4228)

حاکم کی اس روایت کو بھی امام ذھبی " موضوع " قرار دیا ہے ۔(مستدرک حاکم ، رقم 4228)

اس روایت کے بارے میں بھی علماے حدیث وہی حکم لگاتے ہیں جو اِس سے پچھلی روایت کے بارے میں لگایا ہے۔(سلسلۃ الاحادیث الضعیفۃ والموضوعۃ ، رقم 25)

شیخ عبد العزیز بن باز فرماتے ہیں : یہ روایت ، جیساکہ شیخ الاسلام ابن تیمیہ نے واضح کردیا ہے ، ایک من گھڑت روایت ہے ۔ (مجموع فتاوی ابن باز ، 26/328)

اِس باب کی اِن تمام روایات کو تحقیق کی نگاہ سے دیکھنے کے بعد ظاہر ہے کہ ہر عاقل آدمی اِسی نتیجے پر پہنچے گا کہ اِس طرح کی روایتوں سے کوئی دینی استدلال کیا جاسکتا ہے ، نہ کسی مذھبی اعتقاد کی بنیاد ہی اِن پر رکھی جاسکتی ہے ۔ بلکہ اِس سے آگے بڑھ کر میں یہ کہوں گا کہ اِس طرح کی احادیث کی طرف کسی مسلمان کو التفات بھی نہیں کرنا چاہیے ۔ اِس لیے کہ اِس طرح کے مضامین پر مبنی روایتیں اگر اپنی سند کے اعتبار سے بالفرض قابل اعتماد بھی ہوتیں ، تب بھی قرآنِ مجید کی روشنی میں وہ لامحالہ رد کردی جاتیں ۔ کیونکہ کوئی بھی خبر واحد ، خواہ سنداً صحیح ہی کیوں نہ ہو ، قرآن کے خلاف قطعاً قبول نہیں کی جاسکتی ۔ اور تخلیقِ جن وانس کا مقصد تو خود قرآن نے واضح کردیا ہے کہ وہ اللہ کی بندگی ہے ۔ (الذاریات51:56 )

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Dr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.

He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.

During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Dawah Centre of Al-Mawrid Foundation).
In 1992, Dr Gazdar was introduced to Farahi school of thought when first time met with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi (a renowned Islamic scholar) and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.

In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid foundation in Lahore and he completed it with top position in the batch in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid foundation as an associate fellow in research and education in 2002 and worked in this capacity until December 2018. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants verbally and wrote many answers for foundation’s official website too.

In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia (IIUM). In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with the GPA: 3.92.

Dr Amir started his Ph.D programme in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia (IIUM) in February 2015 and completed it with distinction on 25th March 2019. His Ph.D research topic was a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of Hijab and Gender Interaction in the light of Quranic and Hadith texts.

In December 2018, he has been appointed at Al-Mawrid Foundation as Fellow of research and education.

Dr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored several articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). His two research books have been in Malaysia and Lebanon in 2019 (Arabic language).

Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.

Moreover, Dr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at Sultan Haji Ahmad Shah mosque of International Islamic University Malaysia (IIUM) from 2013 to 2016 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years. Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as a volunteer Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author