لکی کمیٹی

سوال:

مجھے لکی کمیٹی کے بارے میں پوچھنا ہے۔ ایک شخص دوہزار روپے مہینہ کی کمیٹی شروع کرتا ہے۔ ہر مہینہ وہ قرعہ اندازی کرکے ایک شخص کو موٹر سائیکل دے دیتا ہے۔ یہ شخص اگلی کمیٹیوں سے بری الزمہ ہو جاتا ہے۔ اسی طرح یہ چلتی ہے۔ اس کے بعد آخری مہینے میں تمام شرکا کو موٹر سائیکلیں مل جاتی ہیں۔ اصل میں اس کمیٹی کا مقصد کسی کاروبار کے فنڈز جمع کرنا ہوتا ہے۔ کیا یہ اسلام میں جائز ہے۔


جواب:

اس طرح کی کمیٹی سود کے بغیر نہیں چلائی جا سکتی۔ اور سود کے حرام ہونے میں کوئی شبہ نہیں ہے۔ اسی طرح اس میں دھوکے کا عنصر بھی موجود ہے۔ یعنی لوگوں کو اصل حقیقت نہیں بتائی جاتی اور انھیں لالچ دے کر ان کے پیسے ذاتی استعمال میں لائے جاتے ہیں۔ تیسری بات یہ ہے کہ اس کی شکل بھی جوئے سے ملتی ہے۔

ان پہلوؤں کے ہوتے ہوئے یہ کمیٹی جائز قرار نہیں دی جا سکتی۔

answered by: Talib Mohsin

About the Author

Talib Mohsin


Mr Talib Mohsin was born in 1959 in the district Pakpattan of Punjab. He received elementary education in his native town. Later on he moved to Lahore and passed his matriculation from the Board of Intermediate and Secondary Education Lahore. He joined F.C College Lahore and graduated in 1981. He has his MA in Islamic Studies from the University of Punjab. He joined Mr Ghamidi to learn religious disciplines during early years of his educational career. He is one of the senior students of Mr Ghamidi form whom he learnt Arabic Grammar and major religious disciplines.

He was a major contributor in the establishment of the institutes and other organizations by Mr Ghamidi including Anṣār al-Muslimūn and Al-Mawrid. He worked in Ishrāq, a monthly Urdu journal, from the beginning. He worked as assistant editor of the journal for many years. He has been engaged in research and writing under the auspice of Al-Mawrid and has also been teaching in the Institute.

Answered by this author