مسجد ميں نماز جنازہ

سوال:

مسجد ميں نماز جنازہ پڑھنا کيسا ہے؟ اس سے منع کيا گيا ہے يا نہيں؟


جواب:

ميرے بھائي ، اس مسئلے ميں فقہا کا اختلاف ہے۔ ايک گروہ کي رائے يہ ہے کہ يہ مکروہ ہے (واضح رہے کہ صرف مکروہ کہا گيا ہے ، حرام يا ناجائز نہيں ، جس کے معني فقہا کے ہاں بہت ہلکے ہوتے ہيں)۔ مکروہ کہنے والوں ميں امام ابو حنيفہ رحمہ اللہ اور امام مالک رحمہ اللہ ہيں۔

اس مسئلے ميں اختلاف کي وجہ دو حديثيں ہيں۔ ايک سے يہ معلوم ہوتا ہے کہ مسجد ميں جنازہ پڑھا جا سکتا ہے اور دوسري سے يہ معلوم ہوتا ہے کہ پڑھنے سے کچھ فائدہ حاصل نہيں ہوتا۔ پہلي روايت جس سے پتا چلتا ہے کہ جنازہ مسجد ميں پڑھا جا سکتا ہے وہ صحيح مسلم کي حديث نمبر 973 ہے (جلد2 ، ص669)۔ اس ميں يہ آيا ہے کہ "سعد بن ابي وقاص فوت ہوئے تو سيدہ عائشہ رضي اللہ تعالي عنہا نے کہا کہ ان کا جنازہ مسجد ميں لا کر پڑھا جائے تاکہ ميں بھي ان کے جنازہ ميں شريک ہو سکوں۔ ان کي يہ بات لوگوں کو پسند نہيں آئي۔ تو انھوں نے کہا: نبي اکرم صلي اللہ عليہ وسلم نے بيضا کے دو بيٹوں سہيل اور اس کے بھائي کي نماز جنازہ مسجد ہي ميں پڑھائي تھي۔"


دوسري روايت سنن ابو داؤد كي حديث نمبر3191 ہے (جلد3 ، ص207)۔ يہ ابو ہريرہ رضي اللہ عنہ سے ہے۔ وہ کہتے ہيں کہ نبي صلي اللہ عليہ وسلم نے فرمايا: جو مسجد ميں نماز جنازہ پڑھے اس کے ليے کچھ نہيں۔

محقق علمائے حديث کے نزديک يہ دوسري روايت کمزور ہے۔ اس ميں ايک راوي صالح ہيں جو اس حديث ميں منفرد ہيں ، اور آخري عمر ميں ان کا حافظہ بھي کمزور پڑ گيا تھا۔ چنانچہ نصوص کي روشني ميں يہ بات واضح ہے کہ نبي اکرم صلي اللہ عليہ وسلم نے مسجد ميں نماز جنازہ پڑھائي اور اس کے ثبوت ميں آنے والي روايت صحيح مسلم کي ہے اور زيادہ قوي ہے۔ اس ليے مسجد ميں نماز جنازہ پڑھنے ميں کوئي مضايقہ نہيں ہے۔ اسے ہم ناجائز نہيں کہہ سکتے جسے نبي صلي اللہ عليہ وسلم نے ايک حديث ميں جائز کرديا ہو۔ اس ليے مسجد ميں نماز جنازہ پڑھ سکتے ہيں اور اس ميں کوئي خرابي نہيں ہے۔

answered by: Sajid Hameed

About the Author

Sajid Hameed


Sajid Shahbaz Khan who writes under his pen name; Sajid Hameed was born on the 10th of October 1965, in Pakpattan, then a small town in Sahiwal, Punjab, Pakistan. Mr.Khan works as the head of the Education Department at Al-Mawrid. His academic endeavors include working as the head of The Department of Islamic and Religious Studies at the University of Central Punjab in Lahore. Having achieved two Master’s degrees: MA Urdu and MA Islamic Studies, he is currently enrolled as a PhD scholar at UMT, Lahore, dissertating on “Muslim Epistemology”.  His MS (MPhil) was on Islamic Jurisprudence with a thesis on “The Probable and Definitive Signification of Text in Islamic Jurisprudence”. Alongside this, he has designed a large number of courses for graduate, undergraduate and younger students. 

Mr.Khan studied the Holy Qur’an from Mr.Muhammad Sabiq, a Deobandi scholar. He gained knowledge of the Hadith through the Muwatta of Imam Malik and through Nuzhah al-Fikr, a famous work on Hadith criticism under Hafiz Ata ur Rehman: an erudite Hadith scholar. He has remained a student of advanced studies in religious disciplines under Mr. Javed Ahmad Ghamidi since 1987, granting him a deep understanding of the Qur’an, Hadith, Arabic literature and other religious disciplines.

Mr.Khan’s teaching career is highlighted by the prestigious colleges and universities of Lahore that he has taught at. Arabic language and rhetoric, Islamic Law and Jurisprudence, Urdu language, Quran, Hadith, and Muslim Philosophy are his primary subjects. Coupled with his academic and professional accolades are appearances on several televised talk shows and being the author of various religious books and research articles.