مردوں کے لیے حوریں تو عورتوں کے لیے کیا؟

سوال:

قرآن میں جگہ جگہ مردوں کے لیے جنت میں حوروں کا وعدہ کیا گیا ہے ۔ سوال یہ ہے کہ پھر عورتوں کو جنت میں کیا ملے گا؟ کیا انہیں غلمان دیے جائیں گے؟


جواب:

قرآن میں جگہ جگہ حوروں کا نہیں ، بلکہ جنت کی نعمتوں کا تذکرہ ہے جو ہر مومن مرد و عورت کو یکساں طور پر ملیں گی۔ حوروں کا تذکرہ قرآن میں صرف چار مقامات پر ہے ۔

اب رہا آپ کا سوال کہ عورتوں کو جنت میں کیا ملے گا، تو واضح رہے کہ قرآن نے اس حوالے سے بالکل صراحت کے ساتھ جو لفظ استعمال کیا ہے وہ زوج (ج:ازواج) کا ہے ۔جس کے معنی جوڑا یعنی Spouseکے ہیں ۔ یعنی مرد و عورت دونوں کے لیے جوڑ ے ہوں گے ۔مردوں کا جوڑ ا عورتوں کے ساتھ اور عورتوں کا مردوں کے ساتھ بنایا جائے گا۔ زوج کا لفظ اس لیے استعمال کیا گیاکہ یہ کہنا کہ عورتوں کو مرد دیے جائیں گے ، حیا کے منافی تھا۔

رہا سوال حوروں کے خصوصی تذکرے کا تو انسانی نفسیات کا ہر طالب علم جانتا ہے کہ اس معاملے میں مردوں کی نفسیات عورتوں سے ذرا مختلف رہی ہے۔ اس نفسیات کی تفصیل یہاں بیان کرنا ممکن نہیں ہے۔ البتہ اس کی ایک جھلک دیکھنی ہے تو موجودہ دور کے میڈیا میں اشتہارات کی صنعت اور ان میں عورتوں کے استعمال کودیکھ لیجیے یا تاریخ کے اوراق میں طاقتور لوگوں کے حرم کی داستانوں کی تفصیلات پڑ ھ لیجیے ۔

اسی نفسیات کی بنا پر قرآن بھی بعض مقامات پر حوروں کا ذکر کر دیتا ہے ۔ وگرنہ اس کا اصولی موقف جنت کی ان نعمتوں کے بارے میں جن کی طلب فطرتِ انسانی میں پائی جاتی ہے ، یہ ہے :

’’اور تم کو اس (جنت) میں ہر وہ چیز ملے گی جس کو تمہارا دل چاہے گا اور تمہارے لیے اس میں ہر وہ چیز ہے جو تم طلب کرو گے ۔‘‘ (حم سجدہ41: 31)

جنت کی نعمتوں کے حوالے سے جب کوئی سوال پیدا ہو تو قرآن کی اس آیت کو پڑ ھ لیا کریں ۔ہر سوال کا جواب اس مختصر آیت میں پوشیدہ ہے ۔

جہاں تک غلمان کا سوال ہے ، تو یہ بات واضح رہنی چاہیے کہ وہ اہل جنت کے خدام ہیں جو ان کی خدمت کے لیے ہمہ وقت موجود رہیں گے ۔قرآن اس معاملے میں بالکل صریح ہے ۔

answered by: Rehan Ahmed Yusufi

About the Author

Rehan Ahmed Yusufi


Mr Rehan Ahamd Yusufi started his career as a teacher and an educationist after obtaining Masters Degrees in Islamic Studies and Computer Technology from the Karachi University with distinction. He started his professional career by serving as a system analyst in a commercial organization. In 1997 he joined service in Saudi Arabia and later immigrated to Canada. 

Mr Rehan Ahmad Yusufi has been attached to people of learning from the beginning of his education career. In 1991, he was introduced to Mr Javed Ahmad Ghamid, a Pakistani religious scholar. After his return from Canada in 2002, Mr Yusufi joined Al-Mawrid, a Foundation for Islamic Research and Education, founded by Mr Ghamidi. Presently Mr Yusufi is an Associate Fellow at Al-Mawrid. His job responsibilities include propagation and communication of the religion as well as religious and moral instruction of people. He is heading a training center in Karachi which offers moral training and religious education to the masses.

Mr Rehan Ahamd Yusufi has very important works and booklets to his credit. The most important of his works include Maghrib sai Mashriq Tak, Urooj-o-Zawaal ka Qanoon awr Pakistan, and Wuhi Rah Guzar. He is also the Chief Editor of the Da’wah edition of the monthly Ishraq published from Karachi. The journal is also published online on its site http://www.ishraqdawah.com

Answered by this author