موجودہ موسيقی ميں درکار اصلاحات

سوال:

موجودہ موسيقی ميں وہ کيا اصلاحات ہونی چاہييں جن کی بنا پر يہ حرمت کے دائرے سے نکل آئے؟


جواب:

موسيقی ميں سے ہر اس چيز کي نفی کی ضرورت ہے جو اخلاقی اور دينی اعتبار سے ممنوع ہے۔ مثلاً

موسيقی کی وہ دھنيں جو سفلی جذبات کو ابھارتی ہيں ، ان سب کی نفی ہونی چاہيے۔موسيقی کے ساتھ جو کلام پيش کيا جاتا ہے ، اس ميں سے شرکيہ ، فحش اور انسان ميں فتنہ يا کوئی دينی و اخلاقی خرابی پيدا کرنے والے سب مضامين کی نفی ہونی چاہيے۔محافل موسيقی ميں ہر اس مغنی يا مغنيہ کی نفی ہونی چاہيے جو اپنے چہرے ، جسم يا انداز و ادا ہی سے فتنے کا باعث ہو۔بعض محافل موسيقی ميں شراب و کباب کا وجود بھی پايا جاتا ہے ، چنانچہ ظاہر ہے ايسی سب حرام چيزوں کی نفی ہونی چاہيے۔سننے والا اگر محسوس کرے کہ موسيقی اس کے تزکيۂ نفس کے راستے ميں رکاوٹ ہے تو اس کے ليے جائز موسيقی بھی ممنوع ہے۔

answered by: Rafi Mufti

About the Author

Muhammad Rafi Mufti


Mr Muhammad Rafi Mufti was born on December 9, 1953 in district Wazirabad Pakistan. He received formal education up to BSc and joined Glaxo Laboratories Limited. He came into contact with Mr Javed Ahmad Ghamidi in 1976 and started occasionally attending his lectures. This general and informal learning and teaching continued for some time until he started regularly learning religious disciplines from Mr Ghamidi in 1984. He resigned from his job when it proved a hindrance in his studies. He received training in Hadith from the scholars of Ahl-i Hadith School of Thought and learned Fiqh disciplines from Hanafi scholars. He was trained in Arabic language and literature by Javed Ahmad Ghamidi. He is attached to Al-Mawrid from 1991.

Answered by this author