معاشرے کي تعمير کے ليے جرائم پيشہ افراد پر سختي

سوال:

آج کل مذہبي گروہ جرائم کے فروغ کا باعث بنے ہوئے ہيں۔ معاشرے کي صحيح خطوط پر تعمير کے ليے جرائم پيشہ افراد کے ساتھ خواہ وہ مذہب کے نام ہي پر جرائم کر رہے ہوں ، سختي سے پيش آنا چاہيے اور جرائم کي بيخ کني کے ليے کسي کے ساتھ رو رعايت نہيں کرني چاہيے۔


جواب:

ہمارے معاشرے کے بہت سے مسائل ہيں جن ميں سے سب سے بڑا مسئلہ يہ ہے کہ يہاں انصاف دستياب نہيں ہے۔ مختلف عوامل ہيں جن کي وجہ سے جرائم پيشہ افراد جرائم کے باوجود سزا سے بچے رہتے ہيں۔ حکمران ، مذہبي اور غير مذہبي ليڈر ، جاگيردار ، رشوت ، سفارش ، دھن دولت يہ تمام عوامل جرائم کي سرپرستي کر رہے ہيں۔ اس صورت حال کا حل يہ ہے کہ عوام ميں اس صورت حال کا شعور پيدا کيا جائے اور موجودہ کرپٹ سياسي قيادت کي جگہ صالح قيادت کو سامنے لايا جائے۔ ان مسائل کو حل کرنے اور ايک بہتر معاشرہ اور ملک وجود ميں لانے کے ليے ہمہ جہتي کام کي ضرورت ہے۔ لوگوں کو صحيح دين بتايا جائے ، ان ميں رياست کے اچھے شہري بننے کي اقدار کو رائج کيا جائے، تعليم کو صحيح خطوط پر استوار کيا جائے ، معاشرے کے محروم طبقات کي بحالي کي جدوجہد کي جائے۔ غرض يہ کہ متعدد ميدان ہيں جن ميں جدوجہد کي ضرورت ہے۔ معاشرے کے باشعور افراد اپني استعداد کے مطابق اس ميں اپنا کردار ادار کريں تو اميد ہے کہ يہ منزل حاصل کي جا سکتي ہے۔ ہم ان تمام افراد کو خدا کي نعمت سمجھتے ہيں جو معاشرے ميں کسي نہ کسي پہلو سے اصلاح احوال کے ليے کردار ادا کر رہے ہيں۔ يہي لوگ اس اميد کے بر آنے کا ذريعہ ہيں کہ ہمارا معاشرہ اخلاقي اور معاشي اعتبار سے ايک بلند معاشرے ميں تبديل ہو جائے۔

answered by: Talib Mohsin

About the Author

Talib Mohsin


Mr Talib Mohsin was born in 1959 in the district Pakpattan of Punjab. He received elementary education in his native town. Later on he moved to Lahore and passed his matriculation from the Board of Intermediate and Secondary Education Lahore. He joined F.C College Lahore and graduated in 1981. He has his MA in Islamic Studies from the University of Punjab. He joined Mr Ghamidi to learn religious disciplines during early years of his educational career. He is one of the senior students of Mr Ghamidi form whom he learnt Arabic Grammar and major religious disciplines.

He was a major contributor in the establishment of the institutes and other organizations by Mr Ghamidi including Anṣār al-Muslimūn and Al-Mawrid. He worked in Ishrāq, a monthly Urdu journal, from the beginning. He worked as assistant editor of the journal for many years. He has been engaged in research and writing under the auspice of Al-Mawrid and has also been teaching in the Institute.

Answered by this author