مسلمان کا کھانا، پینا، سونا اور جاگنا

سوال:

کیا ایک مسلمان کا کھانا، پینا، سونا اور جاگنا سب عبادت ہے؟ قرآن اور حدیث اس بارے میں کیا کہتے ہیں؟


جواب:

قرآن کریم میں اللہ تعالیٰ ارشاد فرماتے ہیں :

''میں نے جنوں اور انسانوں کو اپنی عبات ہی کے لیے پیدا کیا ہے۔''،(ذاریات56:51)

اس آیت میں واضح طور پر یہ بتایا جارہا ہے کہ زندگی کا مقصد بندگی ہے۔زندگی بندگی کیسے بنتی ہے ،اس کا بہترین نمونہ خود ہمارے محبوب نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم کی ذات والا صفات ہے۔آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے متعلق قرآن کریم میں ارشاد ہے:
''اے نبی کہہ دیجیے کہ میری نماز اورمیری قربانی اور میری زندگی اور میری موت عالم کے پروردگار کے لیے ہے۔ اس کا کوئی شریک نہیں ۔اسی کا مجھے حکم دیا گیا ہے اور میں سب سے پہلے فرمانبردارہوں۔''،(انعام62-63:6)
یہ آیہ مبارکہ واضح طور پر زندگی کا مقصد بندگی بیان کرتی ہیں اور بندگی طریقہ بھی۔ بندگی کا طریقہ یہ ہے وہ زندگی میں ہر دوسری حیثیت سے زیادہ رب کے ''مسلم'' یا فرمانبردار بننے کو اپنی ترجیح بنالی جائے۔ انسان کو اللہ تعالیٰ کی طرف سے جو حکم ملے وہ اسے پورے اخلاص اور خوشدلی سے اپنی نیت اللہ کے لیے خاص کرتے ہوئے ادا کرے۔وہ حالات و ماحول اور لوگوں کی رضا و ناراضی سے بے پروا ہوکرسب سے بڑھ کے اور سب سے پہلے رب کی فرمانبرداری کی راہ اختیار کرے۔ظاہر ہے کہ یہ احکام مذہبی نوعیت کے ہوں گے۔ لیکن اس کا نتیجہ نکلے گا کہ اللہ تعالیٰ اس کی زندگی اور اس کی موت کو بھی اپنے لیے ہی تصور کریں گے۔جب اللہ تعالیٰ نے اس کی زندگی کو اپنالیا تو زندہ رہنے کے لیے وہ جو تگ و دو کرے گا۔ مثلاًکھانا، پینا ، سونا ، جاگنا، روزگار، شادی، بچوں کی پرورش، گھر بنانا وغیرہ یہ سب اللہ تعالیٰ کی عبادت ہی تصور کی جائیں گے۔مگر ظاہر ہے ان میں گناہ کا کام کوئی نہ ہو بلکہ مباح نوعیت کے کام ہوں۔تب ہی اللہ تعالیٰ انہیں عبادت اور فرمانبرداری کے زمرے میں شمار کریں گے۔

answered by: Rehan Ahmed Yusufi

About the Author

Rehan Ahmed Yusufi


Mr Rehan Ahamd Yusufi started his career as a teacher and an educationist after obtaining Masters Degrees in Islamic Studies and Computer Technology from the Karachi University with distinction. He started his professional career by serving as a system analyst in a commercial organization. In 1997 he joined service in Saudi Arabia and later immigrated to Canada. 

Mr Rehan Ahmad Yusufi has been attached to people of learning from the beginning of his education career. In 1991, he was introduced to Mr Javed Ahmad Ghamid, a Pakistani religious scholar. After his return from Canada in 2002, Mr Yusufi joined Al-Mawrid, a Foundation for Islamic Research and Education, founded by Mr Ghamidi. Presently Mr Yusufi is an Associate Fellow at Al-Mawrid. His job responsibilities include propagation and communication of the religion as well as religious and moral instruction of people. He is heading a training center in Karachi which offers moral training and religious education to the masses.

Mr Rehan Ahamd Yusufi has very important works and booklets to his credit. The most important of his works include Maghrib sai Mashriq Tak, Urooj-o-Zawaal ka Qanoon awr Pakistan, and Wuhi Rah Guzar. He is also the Chief Editor of the Da’wah edition of the monthly Ishraq published from Karachi. The journal is also published online on its site http://www.ishraqdawah.com

Answered by this author