قرآن مجید میں اختلاف کی حقیقت

سوال:

قرآن مجید میں بیان ہوا ہے کہ اگر یہ غیر اللہ کی طرف سے ہوتا تو اس میں بہت سے اختلافات پاتے،اس کی کیا وجہ ہے کہ جب ہم قرآن مجید پڑھتے ہیں تو کئی جگہ پر ہمیں تضاد محسوس ہوتا ہے؟


جواب:

قرآن مجید میں حقیقت یہ ہے کہ کوئی اختلاف نہیں ہے۔ آپ نے کوئی مثال دی ہوتی تو ہم اس کو سامنے رکھ کر واضح کر دیتے کہ تضاد محض بعض پہلوؤں کو ملحوظ نہ رکھنے کی وجہ سے محسوس ہو رہا ہے، حقیقت میں کوئی تضاد نہیں ہے۔

قرآن مجید کے متعدد مقامات پر باتیں دہرائی گئی ہیں، ان میں کہیں تفصیل اور اجمال کا تعلق ہے، کہیں نتیجہ اور سبب کا۔ کہیں ظاہری پہلو نمایاں ہے اور کہیں معنوی پہلو وغیرہ۔ اصل ضرورت تدبر کی ہے۔ ہر جگہ پر واضح ہوجاتا ہے کہ بظاہر مختلف باتیں حقیقت میں ایک ہی بات کے مختلف پہلو ہیں۔یہ بھی ممکن ہے کہ جن دو باتوں کو ایک قرار دے کر متضاد سمجھا جارہا ہے، وہ حقیقت میں موقع و محل کے اعتبار سے مختلف ہوں۔

answered by: Talib Mohsin

About the Author

Talib Mohsin


Mr Talib Mohsin was born in 1959 in the district Pakpattan of Punjab. He received elementary education in his native town. Later on he moved to Lahore and passed his matriculation from the Board of Intermediate and Secondary Education Lahore. He joined F.C College Lahore and graduated in 1981. He has his MA in Islamic Studies from the University of Punjab. He joined Mr Ghamidi to learn religious disciplines during early years of his educational career. He is one of the senior students of Mr Ghamidi form whom he learnt Arabic Grammar and major religious disciplines.

He was a major contributor in the establishment of the institutes and other organizations by Mr Ghamidi including Anṣār al-Muslimūn and Al-Mawrid. He worked in Ishrāq, a monthly Urdu journal, from the beginning. He worked as assistant editor of the journal for many years. He has been engaged in research and writing under the auspice of Al-Mawrid and has also been teaching in the Institute.

Answered by this author