قرآن، سنت اور حدیث

سوال:

کیا آپ مجھے کسی ایسی سنت کے بارے میں بتا سکتے ہیں جو ہم تک اجماع اور تواتر سے پہنچی ہو، لیکن کتب ِ حدیث میں اُس کا کہیں کوئی بیان موجود نہ ہو ؟ اِسی طرح کیا آپ مجھے کوئی ایسی حدیث بتاسکتے ہیں جو "صحیح" ہو، لیکن قرآن مجید یا سنت سے متصادم ہو ؟ کچھ لوگوں کا یہ کہنا ہے کہ حدیث اگر "صحیح" ہو تو وہ قرآن سے معارض نہیں ہوسکتی ۔ برائے مہربانی، اِس کی وضاحت فرمادیں۔


جواب:

جہاں تک آپ کے پہلے سوال کا تعلق ہے تو اِس حوالے سے میری تحقیق کے مطابق وہ اعمالِ سنن جنہیں انبیا علیہم السلام کے دین میں آسمانی شریعت کی حیثیت حاصل ہے اور جنہیں آخری پیغمبر محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے تجدید واصلاح اور بعض اضافوں کے ساتھ اپنے ماننے والوں میں دین کی حیثیت سے جاری فرمایا ہے اور وہ آپ سے اُمت کے علمی اجماع اور عملی تواتر سے ہم تک پہنچی ہیں ؛ اُن سنن میں کوئی ایسی سنت موجود نہیں ہے جس کے بیان،تاکید،شرح ووضاحت یا آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اُس پر عمل کی روایت سے حدیث کا پورا ذخیرہ کلیۃً خاموش ہو ۔ ہر سنت کے بارے میں کچھ نہ کچھ اخبار آحاد کتبِ حدیث میں بہرحال مل جاتی ہیں ؛ جن میں یا تو اُس سنت کا بیان ہوتا ہے،یا اُس پر عمل کی تاکید معلوم ہوتی ہے،یا اُس پر عمل کے حوالے سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کا اپنا اُسوہ واضح ہوتا ہے،یا اُس سنت کے بارے میں تفہیم وتبیین کے پہلو سے کوئی روشنی ملتی ہے ۔ ظاہر ہے کہ حدیث کے ذخیرے میں سننِ شریعت کے بارے میں اِس سب کچھ کا پایا جانا بالکل فطری ہے ۔ کیونکہ جن سُنن کو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسلامی شریعت کی حیثیت دی،اُن میں سے بعض کو از سر نو زندہ کیا،کچھ سنن میں پہلے سے رائج بعض بدعتوں کی اصلاح کی،علم الٰہی کی روشنی بعض نئی سُنن اپنے ماننے والوں میں جاری فرمائیں،بعض سُنن کے بارے میں ضرورت کے موقعوں پر کچھ وضاحتیں بھی فرمائیں،اپنی زندگی میں برسوں اُن پر عمل پیرا رہے؛جب یہ واقعہ ہے تو پھر یہ کیسے ممکن ہے کہ ذخیرۂ حدیث،جو کہ اصلاً رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم ہی کے علم وعمل کی روایت پر مبنی ہے،وہ اِس طرح کی کسی سنت کے بارے میں بالکل خاموش ہو۔

دوسرے سوال کے حوالے سے یہ بات سب سے پہلے واضح رہنی چاہیے کہ حدیث کے بارے میں لفظ "صحیح" علمِ حدیث کی ایک اصطلاح کے طور پر استعمال ہوتا ہے،نہ کہ اُس معنی میں جو کہ اُردو اور عربی کلام میں عموماً معلوم ہے ۔ جس حدیث کو علماے حدیث "صحیح" قرار دیتے ہیں،اِس کا مطلب یہ ہوتا ہے کہ وہ روایت اپنی سند کے لحاظ سے محدثین کے مقرر کردہ اُن معیارات پر پورا اُترتی ہے جن کی بنیاد پر وہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم سے کسی حدیث کے ثبوت کو اپنی رائے میں قابل اعتبار واعتماد قرار دیتے ہیں ۔ حدیث کے ذخیرے میں بلاشبہ بعض ایسی روایات کا پایا بھی بالکل ممکن ہے جو اپنی سند کے اعتبار سے تو "صحیح" کے درجے کی ہوں،لیکن اُن کے متن میں جو بات بیان ہوئی ہو وہ قرآن یا سنت سے متصادم ہو ۔ اِس طرح کی روایات کے بارے میں اُصول یہ ہے کہ غور وتدبر کے بعد اگر قرآن وسنت کی روشنی میں اِن کی کوئی صحیح تاویل ممکن ہو تو فبہا، ورنہ اہل علم کے نزدیک ایسی احادیث سنداً "صحیح" ہونے کے باوجود درایۃً رد کردی جاتی ہیں ۔ مثال کے طور پر امام مسلم نے اپنی "صحیح" میں مندرجہ ذیل احادیث نقل کی ہے جو سند کے اعتبار سے اُن کی تحقیق کے مطابق "صحیح" کے درجے کی ہیں،لیکن اِن کے متن میں جو بات بیان ہوئی ہے وہ واضح طور پر قرآن کی اِس آیت سے متصادم ہے کہ : ولا تزر وازرة وزر اخری۔ "اور کوئی بوجھ اُٹھانے والا(اُس دن)کسی دوسرے کا بوجھ نہیں اُٹھائے گا"۔ (انعام : 164)

ابو موسی اشعری رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : مسلمانوں میں سے کچھ لوگ قیامت کے دن اِس حال میں آئیں گے کہ اُن کے گناہ پہاڑوں کی مانند ہوں گے ۔ پھر اللہ تعالٰی اُن کے اُن گناہوں کو بخشں کر یہود ونصاری پر وہ گناہوں ڈال دیں گے ۔

ابو موسی اشعری رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا : قیامت کے دن اللہ تعالٰی ہر مسلمان کے سامنے ایک یہودی یا نصرانی کو پیش کر کے فرمائیں گے کہ تمہاری بدلے آگ میں یہ جائے گا۔(مسلم، رقم 2767)

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Dr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.

He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.

During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Dawah Centre of Al-Mawrid Foundation).
In 1992, Dr Gazdar was introduced to Farahi school of thought when first time met with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi (a renowned Islamic scholar) and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.

In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid foundation in Lahore and he completed it with top position in the batch in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid foundation as an associate fellow in research and education in 2002 and worked in this capacity until December 2018. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants verbally and wrote many answers for foundation’s official website too.

In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia (IIUM). In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with the GPA: 3.92.

Dr Amir started his Ph.D programme in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia (IIUM) in February 2015 and completed it with distinction on 25th March 2019. His Ph.D research topic was a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of Hijab and Gender Interaction in the light of Quranic and Hadith texts.

In December 2018, he has been appointed at Al-Mawrid Foundation as Fellow of research and education.

Dr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored several articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). His two research books have been in Malaysia and Lebanon in 2019 (Arabic language).

Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.

Moreover, Dr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at Sultan Haji Ahmad Shah mosque of International Islamic University Malaysia (IIUM) from 2013 to 2016 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years. Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as a volunteer Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author