شتمِ رسول کا مسئلہ——فقہاے اُمت کی نظر میں

سوال:

عام طور پر یہ بتایا جاتا ہے کہ مسلمان ریاست میں کوئی شخص جو مسلمان شہری کی حیثیت سے زندگی بسر کرتا ہے؛وہ اگر گستاخیٔ رسول کا علانیہ کا ارتکاب کرے تو تمام فقہاے اُمت کے مابین اِس پر اتفاق ہے کہ ایسے شخص کے لیے خاص اِس جرم کی شرعی سزا (حَدّ) قتل ہے ۔ علمِ اسلامی کی رو سے کیا یہ بات درست ہے؟


جواب:

مصادرِ فقہ اسلامی کی تحقیقی مراجعت سے معلوم ہوتا ہے کہ اگر چہ فقہا کے ایک گروہ کی یہی رائے ہے،تاہم فقہاے اُمت کی نسبت سے اِس رائے پر اجماع کا دعوی قطعاً درست نہیں ہے ۔ اِستقصا سے معلوم ہوتا ہے کہ علماے اُمت کے مابین اِس مسئلے میں نزاع ہے ۔ اِس معاملے میں اُن کے ہاں مندرجہ ذیل دو آرا پائی جاتی ہیں :

ایک یہ کہ ایسے مجرم کو،خواہ وہ مرد ہو یا عورت،خاص اِس جرم کی شرعی حَدّ کے طور پر قتل کیا جائے گا ۔

مشہور روایت کے مطابق یہ إمام مالک اور اُن کے شاگردوں،إمام أحمد،لیث بن سعد اور اسحاق بن راہویہ کا نقطۂ نظر ہے(1)۔

دوسری رائے یہ ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی شان میں گستاخی کے اِس جرم کا ارتکاب کر کے ایسا شخص درحقیقت رسالت پر عدم ایمان کا اعلان کرتا اور

اِس کے نتیجے میں در اصل دائرۂ اسلام سے خارج اور مرتد ہوجاتا ہے ۔ چنانچہ اُسے بر بنائے ارتداد سزاے موت دی جائے گی،نہ کہ بر بنائے توہینِ رسالت اُس کی حَدّ شرعی کے طور پر ۔

یہ نقطۂ نظر سیدنا ابن عباس رضی اللہ عنہ،إمام أبوحنیفہ،اُن کے شاگردوں،إمام ثوری،إمام اوزاعی اور اہل کوفہ کا ہے ۔ ایک روایت کے مطابق إمام مالک رحمہ اللہ کی بھی یہی رائے ہے(2)۔

إمام أبو یوسف رحمہ اللہ (متوفی:183 ھ) "کتاب الخراج" میں فرماتے ہیں :

أيما رجل مسلم سب رسول الله صلى الله عليه وسلم أو كذَّبه أو عابه أوتنقصه فقد كفر بالله وبانت منه زوجته ، فإن تاب وإلا قتل ، وكذلك المرأة ، إلا أن أبا حنيفة قال: لا تقتل المرأة (3).

''جس مسلمان نے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم پر سب وشتم کیا ، اُن کی تکذیب کی یا وہ اُن کی عیب جوئی یا تنقیص کا مرتکب ہوا تو بلا شبہ اُس نے کفر کیا (اور اِس طرح وہ مرتد ہوگیا) ۔ اور اِس (ارتداد) کے نتیجے مین اُس کی بیوی بھی اُس کے عقدِ نکاح سے نکل گئی ۔ پھر اگر وہ (اپنے اِس جرم سے) توبہ کرلے(اور دائرۂ اسلام میں دوبارہ داخل ہوجائے) تب تو اُس کے لیے معافی ہے،ورنہ دوسری صورت میں اُسے قتل کردیا جائے گا ۔ اِس طرح کے جرم کا ارتکاب اگر کوئی خاتون کرے تو اُس کا حکم بھی یہی ہے ۔ تاہم یہ واضح رہے کہ إمام أبو حنیفہ رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ عورت کو قتل نہیں کیا جائے گا''۔

ائمہ حنفیہ کا اِس پر مزید کہنا یہ ہے کہ قتل کی یہ سزا اگر خاص گستاخی رسول کی حَدِّ شرعی ہوتی تو پھر اِس جرم کے مرتکب غیر مسلم شہری کو بھی سزاے موت ہی دی جاتی ۔ جبکہ اُس کی سزا ائمہ حنفیہ کے نزدیک،جیسا کہ آگے واضح ہوگا،قتل نہیں بلکہ ''تادیب وتعزیر'' ہے ۔

مزید یہ کہ بعض احادیث و آثار کی بنیاد پر امام حسن بصری،إمام نخعی،إمام أبوحنیفہ اور اُن کے بعض شاگردوں کی رائے یہ ہے کہ ارتداد اگر کسی خاتون سے ہوا ہے تو اُسے قید کیا جائے گا؛اسلام کی دعوت دی جائے گی اور اُسے اسلام پر مجبور کیا جائے گا ۔ خواتین اِس معاملے میں سزائے موت سے مستثنٰی ہیں ۔ اُنہیں بہر حال قتل نہیں کیا جائے گا ۔ یہی رائے سیدنا عبد اللہ بن عباس رضی اللہ عنہ سے مروی ہے(4)۔


(1) الصارم المسلول علی شاتم الرسول،الإمام ابن تيمية/ص:260۔ دار ابن حزم،بيروت ۔ طبعۂ اُولٰی:1417ھ۔ السيف المسلول علی من سب الرسول،الإمام السبکی،ص:156۔دار الفتح،عمان،الأردن ۔ طبعهٔ اولٰی:1421ھ۔ مجموعة رسائل ابن عابدين،علامه امين بن عابدين شامی،320/1۔مطبعة در سعادت ۔ الإستانة،الترکية ۔ طُبع علی ذمة محمد هاشم الکبتی ۔1325ھ۔

(2) الصارم المسلول علی شاتم الرسول،الإمام ابن تيمية/ص:334،320۔ دار ابن حزم،بيروت ۔ طبعهٔ اُولٰی:1417ھ۔ زاد المعاد فی هدی خير العباد ۔ الإمام ابن القيم ۔54/5۔ عون المعبود شرح سنن أبی داود ، أبو الطيب محمد شمس الحق العظيم آبادی 12/12۔ المفصل فی شرح حديث ''من بدل دينه فاقتلوه'' علی بن نايف الشحود، 397/2۔ السيف المسلول علی من سب الرسول،الإمام السبکی،ص154۔155۔ دار الفتح،عمان،الأردن ۔ طبعهٔ اولٰی:1421ھ۔ مجموعة رسائل ابن عابدين،علامه امين بن عابدين شامی،320/1۔مطبعة در سعادت ۔ الإستانة،الترکية ۔ طُبع علی ذمة محمد هاشم الکبتی ۔1325ھ۔

(3) ص:182۔ المطبعة السلفية،القاهرة . الطبعةالثالثة ، عام 1382هـ ۔

(4) مسند أبی حنيفة (رواية أبی نعيم)،رقم الحديث :260 ،190/1 مکتبة الکوثر،رياض ۔ طبعهٔ اُولٰی ۔ مصنف ابن ابی شيبة،رقم الحديث : 28407،32127،35814۔مکتبة الرشد،الرياض ۔ طبعهٔ اُولٰی:2004 م ۔ کتاب الخراج،إمام أبو يوسف،ص:180۔181۔الشفا بتعريف حقوق المصطفٰی بتحقيق الشيخ علی محمد البجاوی،القاضی عياض،1024/2۔ دار الکتاب العربی،بيروت ۔1404ھ۔ الصارم المسلول علی شاتم الرسول،الإمام ابن تيمية/ص:260۔ دار ابن حزم،بيروت ۔ طبعهٔ اُولٰی:1417ھ۔ عون المعبود شرح سنن أبی داود،أبو الطيب محمد شمس الحق العظيم آبادی،12/12۔ مجموعة رسائل ابن عابدين،علامہ امين بن عابدين شامی،319/1 ،322۔ مطبعة در سعادت ۔ الإستانۃ،الترکية ۔ طُبع علی ذمة محمد هاشم الکبتی ۔1325ھ۔

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Dr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.

He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.

During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Dawah Centre of Al-Mawrid Foundation).
In 1992, Dr Gazdar was introduced to Farahi school of thought when first time met with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi (a renowned Islamic scholar) and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.

In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid foundation in Lahore and he completed it with top position in the batch in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid foundation as an associate fellow in research and education in 2002 and worked in this capacity until December 2018. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants verbally and wrote many answers for foundation’s official website too.

In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia (IIUM). In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with the GPA: 3.92.

Dr Amir started his Ph.D programme in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia (IIUM) in February 2015 and completed it with distinction on 25th March 2019. His Ph.D research topic was a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of Hijab and Gender Interaction in the light of Quranic and Hadith texts.

In December 2018, he has been appointed at Al-Mawrid Foundation as Fellow of research and education.

Dr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored several articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). His two research books have been in Malaysia and Lebanon in 2019 (Arabic language).

Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.

Moreover, Dr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at Sultan Haji Ahmad Shah mosque of International Islamic University Malaysia (IIUM) from 2013 to 2016 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years. Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as a volunteer Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author