تنخواہ اور بچت پر زکوٰۃ

سوال:

زکوٰۃ کے حساب کتاب سے متعلق میرا ایک سوال ہے: جاوید احمد غامدی صاحب نے اپنی ایک گفتگو میں فرمایا کہ تنخواہ (Salary Income) پر اڑھائی فیصد کے بجائے دس فیصد کے حساب سے زکوٰۃ ادا کرنی ہو گی۔سوال یہ ہے کہ اگر کوئی شخص اپنی تنخواہ کا دس فیصد بطورِ زکوٰۃ ادا کر دیتا ہے ، اور پھر اسی تنخواہ میں سے کچھ رقم پس انداز کرنے میں بھی کامیاب ہوجاتا ہے تو کیا اسے اس بچائی ہوئی رقم پر بھی زکوٰۃ ادا کرنی ہو گی؟ مثلاً اگر میں ایکسال میں 5,00,000 روپے کماتا ہوں اور دس فیصد کے حساب سے 50,000 روپے بطورِ زکوٰۃ ادا کر دیتا ہوں اور پھرسال بھر میں 3,00,000 خرچ کرنے کےبعد 1,50,000 بچانے میں کامیاب ہوجاتا ہوں تو کیا اگلا سال آنے پر مجھے اس بچائے ہوئے 1,50,000 پر بھی زکوٰۃ ادا کرنی ہو گی؟


جواب:

جی ہاں آپ کو بچائے ہوئے ڈیڑھ لاکھ روپے پر بھی اڑھائی فیصد کے حساب سے زکوٰۃ دینی ہو گی۔ اس بات کو سمجھ لیجیے کہ جس طرح ایک شخص فصل اگاتا اور کٹائی کے موقع پر اس پر دس فیصد زکوٰۃ یعنی عشر ادا کرتا ہے اور سال کے آخر میں اپنی بچت پر بھی زکوٰۃ ادا کرتا ہے ، اسی طرح تنخواہ پر زکوٰۃ ادا کرنے کے بعد سال کے آخر میں اگر رقم بچ رہی ہے تو اس پر مال کی زکوٰۃ عائد ہو گی۔ جاوید صاحب نے صرف یہ کیا ہے کہ تنخواہ کا الحاق پیدا وار سے کر دیا ہے ۔چنانچہ تنخواہ پر آپ اس وجہ سے زکوٰۃ دیتے ہیں کہ وہ پیداوار ہے اور سال کے آخر میں آپ جو زکوٰۃ دیتے ہیں وہ مال یا بچت کی زکوٰۃ ہوتی ہے ۔تاہم یہ بات بھی ذہن میں رہے کہ جاوید صاحب کے نزدیک حکومت زکوٰۃ کے علاوہ لوگوں سے کوئی اور رقم بطور ٹیکس نہیں لے سکتی، چنانچہ جو ٹیکس آپ ادا کرتے ہیں ، اسے اپنی زکوٰۃ سے منہا کرسکتے ہیں ۔

یہ تو قانون کا بیان ہو گیا تاہم یاد رکھنے کی اصل بات یہ ہے کہ زکوٰۃ اور انفاق کی رقم بظاہر آپ کے مال سے کم ہوکر دوسروں کو جاتی ہے ، مگر درحقیقت یہی وہ رقم ہے جو آپ کے پاس بچتی ہے ۔ آ پ کا انفاق ہی وہ چیز ہے جو کئی گنا بڑ ھا چڑ ھا کر آپ کو لوٹا دیا جائے گا۔باقی سب تو ختم اور فنا ہوجانا ہے ۔

answered by: Rehan Ahmed Yusufi

About the Author

Rehan Ahmed Yusufi


Mr Rehan Ahamd Yusufi started his career as a teacher and an educationist after obtaining Masters Degrees in Islamic Studies and Computer Technology from the Karachi University with distinction. He started his professional career by serving as a system analyst in a commercial organization. In 1997 he joined service in Saudi Arabia and later immigrated to Canada. 

Mr Rehan Ahmad Yusufi has been attached to people of learning from the beginning of his education career. In 1991, he was introduced to Mr Javed Ahmad Ghamid, a Pakistani religious scholar. After his return from Canada in 2002, Mr Yusufi joined Al-Mawrid, a Foundation for Islamic Research and Education, founded by Mr Ghamidi. Presently Mr Yusufi is an Associate Fellow at Al-Mawrid. His job responsibilities include propagation and communication of the religion as well as religious and moral instruction of people. He is heading a training center in Karachi which offers moral training and religious education to the masses.

Mr Rehan Ahamd Yusufi has very important works and booklets to his credit. The most important of his works include Maghrib sai Mashriq Tak, Urooj-o-Zawaal ka Qanoon awr Pakistan, and Wuhi Rah Guzar. He is also the Chief Editor of the Da’wah edition of the monthly Ishraq published from Karachi. The journal is also published online on its site http://www.ishraqdawah.com

Answered by this author