زائرِ مکہ اور احرام

سوال:

میں اسلام آباد میں اور میرے والدین مکہ میں رہتے ہیں۔ میں ہر سال گرمی کی چھٹیوں میں ان سے ملنے جاتا ہوں۔ میں ہمیشہ وزٹ ویزے پر جاتا ہوں نہ کہ عمرہ کے ویزے پر۔ میرا سوال یہ ہے کہ کیا میرے لیے لازم ہے کہ میں ہر دفعہ اسلام آ باد سے احرام باندھ کر مکہ جاؤں۔ کیا میں ایسا نہیں کر سکتا کہ مکہ اپنے گھر پہنچ کر مسجدِ عائشہ وغیرہ کے پاس سے احرام باندھوں اور پھر عمرہ ادا کروں؟


جواب:

آپ نے جو مسئلہ بیان کیا ہے اس میں اہل علم مختلف الرائے ہیں۔ اس اختلاف کو ابن رشد اس طرح بیان کرتے ہیں:

’’کسی نے حج وعمرہ کا ارادہ نہیں کیا ہے اوران میقاتوں (وہ مقامات جہاں سے حجاج کے لیے احرام باندھنا لازم ہے )سے گزرگیا ہے توایک گروہ کاقول ہے کہ جوشخص بھی ان میقاتوں سے گزرے اس پر احرام باندھنالازم ہے۔ سوائے اس شخص کے جو بار بارگزرے جیسے لکڑ ی چننے والے وغیرہ۔ یہی قول امام مالک کا ہے۔ دوسرا گروہ کہتا ہے کہ حج اورعمرہ کا ارادہ رکھنے والے کے سوا کسی پراحرام باندھناواجب نہیں ہے۔ یہ ان سب لوگوں کے لیے ہے جواہل مکہ میں سے نہیں ہیں۔ اہل مکہ حج یاعمرہ کا احرام باندھیں گے اورحرم کے باہرمقام حِلّ تک جائیں گے۔‘‘ ، (بدایۃ المجتہد ونہایۃ المقتصد 334)

ہماری رائے دوسرے گروہ کے مطابق ہے۔ یعنی آپ چونکہ اصلاً عمرہ کے لیے نہیں ، بلکہ اپنے والدین سے ملنے جاتے ہیں اس لیے آ پ بغیر احرام کے مکہ مکرمہ جا سکتے ہیں اور وہاں سے جیسا کہ ابن رشد نے بیان کیا ہے حرم سے باہر مقام حِلّ تک جا کر کسی بھی جگہ جیسے مسجد عائشہ سے احرام پہن کر عمرہ ادا کرسکتے ہیں۔

answered by: Rehan Ahmed Yusufi

About the Author

Rehan Ahmed Yusufi


Mr Rehan Ahamd Yusufi started his career as a teacher and an educationist after obtaining Masters Degrees in Islamic Studies and Computer Technology from the Karachi University with distinction. He started his professional career by serving as a system analyst in a commercial organization. In 1997 he joined service in Saudi Arabia and later immigrated to Canada. 

Mr Rehan Ahmad Yusufi has been attached to people of learning from the beginning of his education career. In 1991, he was introduced to Mr Javed Ahmad Ghamid, a Pakistani religious scholar. After his return from Canada in 2002, Mr Yusufi joined Al-Mawrid, a Foundation for Islamic Research and Education, founded by Mr Ghamidi. Presently Mr Yusufi is an Associate Fellow at Al-Mawrid. His job responsibilities include propagation and communication of the religion as well as religious and moral instruction of people. He is heading a training center in Karachi which offers moral training and religious education to the masses.

Mr Rehan Ahamd Yusufi has very important works and booklets to his credit. The most important of his works include Maghrib sai Mashriq Tak, Urooj-o-Zawaal ka Qanoon awr Pakistan, and Wuhi Rah Guzar. He is also the Chief Editor of the Da’wah edition of the monthly Ishraq published from Karachi. The journal is also published online on its site http://www.ishraqdawah.com

Answered by this author