ظہور مھدي

سوال:

اس دور ميں انسان کے گھمبير مسائل کو حل کرنے کے ليے کيا مھدي جيسے کسي رہنما کي شديد ضرورت نہيں؟


جواب:

جہاں تک دنيا کے آخري زمانے ميں ظہور مھدي کي خبر کا تعلق ہے تو اس سے متعلق احاديث ميں سے کوئي ايک حديث بھي صحيح نہيں ہے۔ مھدي کا يہ تصور مسلمانوں ميں موجود نبي صلي اللہ عليہ وسلم کي ان پيش گوئيوں ميں خود ساختہ اضافوں اور تبديليوں سے وجود ميں آيا ہے ، جنھيں امام بخاري اور امام مسلم اپني صحيحين ميں لائے ہيں۔ ہمارے نزديک ان پيش گوئيوں کا مصداق عمر بن عبد العزيز رحمہ اللہ کي ذات بابرکات تھي۔ ليکن يہ پيش گوئياں مختلف گروہوں کي سياسي اور مذہبي اغراض کا شکار ہوتے ہوئے ، کئي خود ساختہ تبديليوں اور اضافوں کے نتيجے ميں خروج مھدي کي روايات ميں ڈھل گئيں۔ چنانچہ ہمارے خيال ميں نبي صلي اللہ عليہ وسلم کي اصل پيش گوئي عمر بن عبد العزيز کي صورت ميں پوري ہو چکي ہے۔ جہاں تک آپ کي اس بات کا تعلق ہے کہ اس دور ميں انسان کے گھمبير مسائل کو حل کرنے کے ليے کسي رہنما کي شديد ضرورت ہے تو اس سلسلے ميں يہ عرض ہے کہ جب تک اس دنيا ميں قرآن مجيد موجود ہے اس وقت تک کسي خصوصي رہنما کي ضرورت نہيں ہے ، کيونکہ قرآن خود ايک خاص کتاب ہے جو انسان کي رہنمائي کرنے ميں بالکل کامل ہے اور اسے قيامت تک کے ليے اللہ نے خاص طريقے سے محفوظ کيا ہے ، چنانچہ اب اس کے ہوتے ہوئے کسي رہنما کي ضرورت نہيں ہے۔

answered by: Rafi Mufti

About the Author

Muhammad Rafi Mufti


Mr Muhammad Rafi Mufti was born on December 9, 1953 in district Wazirabad Pakistan. He received formal education up to BSc and joined Glaxo Laboratories Limited. He came into contact with Mr Javed Ahmad Ghamidi in 1976 and started occasionally attending his lectures. This general and informal learning and teaching continued for some time until he started regularly learning religious disciplines from Mr Ghamidi in 1984. He resigned from his job when it proved a hindrance in his studies. He received training in Hadith from the scholars of Ahl-i Hadith School of Thought and learned Fiqh disciplines from Hanafi scholars. He was trained in Arabic language and literature by Javed Ahmad Ghamidi. He is attached to Al-Mawrid from 1991.

Answered by this author