زیارتِ مدینہ اور مسجد نبوی میں چالیس نمازیں

سوال:

سفرِ حج وعمرہ میں زیارتِ مدینہ منورہ کی دینی حیثیت کیا ہے ؟ کیا مسجدِ نبوی کی زیارت کرنا حج وعمرہ کی عبادات سے بھی کوئی تعلق رکھتا ہے ؟ عام طور پر کہا جاتا ہے کہ حاجی یا معتمر کو چاہیے کہ وہ مدینہ منورہ مین اپنے قیام کے دوران مین مسجدِ نبوی میں کم سے کم چالیس فرض نمازیں بغیر کسی ناغے کے جماعت کے ساتھ پڑھے تو اِس عمل کی دین میں بڑی فضیلت ہے ۔ حدیث وسنت کی رو سے کیا یہ بات درست ہے ؟


جواب:

دیکھیے، دور دراز سے سفر کر کے بیت الحرام میں آنے والے ایک مسلمان کی یہ فطری خواہش ہوا کرتی ہے کہ وہ مزید چند گھنٹوں کا سفر کر کے نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے دار الہجرت اور آخری مسکن،مدینہ منورہ اور اس میں آپ کی مسجد، مسجدِ نبوی کی زیارت بھی کرلے۔چنانچہ وہ اِس مقصد سے اور اپنی اِس پاکیزہ خواہش کے ساتھ مدینہ منورہ کا قصد کرتا ہے ۔ ظاہر ہے کہ اِس مقصد کو حاصل کرنا ایک مسلمان کے لیے بڑی سعادت کی بات ہے ۔ حج وعمرہ کے سفر میں زیارتِ مدینہ ومسجد نبوی کی حیثیت بس یہی ہے ۔ چنانچہ واضح رہے کہ زیارتِ مدینہ کا،جیساکہ عامۃ الناس خیال کرتے ہیں،حج وعمرہ کے مناسک سے قطعاً کوئی تعلق نہیں ہے ۔ یہ حج یا عمرہ کا کوئی حصہ نہیں ہے ۔ دین وشریعت کی رو سے حج وعمرہ،اِس کے بغیر بھی ہر لحاظ سے مکمل ہوتے ہیں اور اُن میں کسی اعتبار سے کوئی نقص نہیں رہ جاتا ۔

اب جب زیارتِ مدینہ کی حیثیت یہی ہے تو بالبداہت واضح ہے کہ آدمی جتنا چاہے حرمِ نبوی میں رہے؛جتنی نمازیں چاہے مسجد نبوی میں ادا کرے اور جب چاہے وہاں سے رخصت ہوجائے۔ اِس پر کسی اعتبار سے اُس پر کوئی پابندی ہے،نہ دین میں کوئی متعین اجر وفضیلت ہی اِس باب میں ثابت ہے ۔

اِس حوالے سے عام طور پر جس روایت کی شہرت ہوگئی ہے اور جس کی طرف سائل نے بھی یہاں اشارہ کیا ہے،اُس کی تفصیل حسب ذیل ہے :سیدنا انس بن مالک سے روایت ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا:

جس شخص نے میری مسجد میں بغیر کسی ناغے کے چالیس (فرض) نمازیں مسلسل پڑھیں اُس کے لیے دوزخ کی آگ سے چھٹکارہ،عذاب سے نجات اور نفاق سے براءت لکھ دی جاتی ہے ۔ (احمد، رقم: 12605۔ طبرانی فی الاوسط،رقم:5444)

اِس روایت کے بارے میں اصلاً یہ بات جان لینی چاہیے کہ تحقیقِ سند کی رو سے علماے محدثین کے نزدیک یہ ایک ضعیف اور ناقابل حجت روایت ہے۔(سلسلۃ الاحادیث الضعیفۃ والموضوعۃ ، البانی،رقم:364 ۔ مسند احمد بتحقیق الشیخ شعیب ارناؤوط،رقم: 12605) چنانچہ اِس سے کسی بھی دینی عمل کے لیے کوئی استدلال نہیں کیا جاسکتا ۔

اِس روایت کو "صحیح" سمجھنا اور اِس پر عمل کرنا تو در کنار،اِس طرح کی کمزور روایتوں کو رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی نسبت سے اور آپ کے فرمان کی حیثیت سے بیان کرنا بھی قطعاً مناسب نہیں ہے ۔ یہ روایت چونکہ صحت کے ساتھ ثابت ہی نہیں ہے،چنانچہ اِس کی بنیاد پر پیش کیے جانے والے عمل اور اُس کی فضیلت کی بھی ظاہر ہے کہ دین کوئی حیثیت باقی نہیں رہ جاتی ۔ زیارت مدینہ سے متعلق یہ منجملہ اصلاح طلب اُمور ہے ۔ چنانچہ اِس کی اصلاح کرلینی چاہیے ۔

answered by: Muhammad Amir Gazdar

About the Author

Muhammad Amir Gazdar


Dr Muhammad Amir Gazdar was born on 26th May 1974 in Karachi, Pakistan. Besides his studies at school, he learned the science of Tajweed Al-Qur’an from a renowned Qu’anic reciter, Qari Khalil Ahmad Bandhani and completed the memorization of the Qur’an in 1987 at Madrasah Tajweed al-Qur’an, Karachi.

He obtained his elementary religious education from Jami’ah Dar al-Hanafiyyah, Karachi. He graduated from Jami’ah al-Uloom al-Islamiyyah, Binnori Town, Karachi and obtained Shahadah Aalamiyyah in 1996 and received an equivalent certificate of Masters in Islamic Studies from the Karachi University.

During the year 1997 and 1998, he served in Jami’ah Binnori Town as a Tafseer and Tajweed teacher and also taught at Danish Sara Karachi (A Former Dawah Centre of Al-Mawrid Foundation).
In 1992, Dr Gazdar was introduced to Farahi school of thought when first time met with Ustaz Javed Ahmad Ghamidi (a renowned Islamic scholar) and had the chance to learn Islam from him and tried to solve many controversial issues of Hadith, Fiqh and Usool under his supervision.

In January 1999, he started another Masters programme in Islamic Sciences offered by Al-Mawrid foundation in Lahore and he completed it with top position in the batch in August 2001.
Mr Gazdar officially joined Al-Mawrid foundation as an associate fellow in research and education in 2002 and worked in this capacity until December 2018. He worked for the Karachi center of Al-Mawrid for about 10 years as a teacher, lecturer and researcher. He taught various courses, delivered weekly lectures, conducted workshops on different topics, taught in online classes, answered questions of the participants verbally and wrote many answers for foundation’s official website too.

In September 2012, he moved to Kuala Lumpur Malaysia to participate in another Masters programme in Islamic Revealed Knowledge and Heritage at International Islamic University Malaysia (IIUM). In January 2015, he completed his 3rd Masters in Qur’an and Sunnah department of the university with the GPA: 3.92.

Dr Amir started his Ph.D programme in the Qur’an and Sunnah department of International Islamic University Malaysia (IIUM) in February 2015 and completed it with distinction on 25th March 2019. His Ph.D research topic was a comparative study of contemporary scholars’ view on the issue of Hijab and Gender Interaction in the light of Quranic and Hadith texts.

In December 2018, he has been appointed at Al-Mawrid Foundation as Fellow of research and education.

Dr Gazdar has many academic works to his credit. He has written a few booklets published in Urdu language and has authored several articles which have been published in various research journals in Malaysia, India and Pakistan (Arabic language). His two research books have been in Malaysia and Lebanon in 2019 (Arabic language).

Furthermore, he is actively working in the Hadith project of Ustaz Javed Ahmad Ghamidi and playing a significant role in it as a researcher and writer since January 2016.

Moreover, Dr Gazdar has been leading in Qiyam-e-Ramadhan and Tarawih prayer since 1989 in various mosques and at Sada Bahar Lawn (2002-2011) in Karachi, Pakistan. He worked as a part time Imam at Sultan Haji Ahmad Shah mosque of International Islamic University Malaysia (IIUM) from 2013 to 2016 where he lead in Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan for four years. Other than this, he has served for several mosques in Kuala Lumpur as a volunteer Imam for Tarawih and Qiyam-e-Ramadhan.

Answered by this author